آج اسفند یار ولی جو کچھ ہیں کس شخصیت کے احسانات کی وجہ سے ہیں ؟

لاہور (ویب ڈیسک) نامور کالم نگار مظہر برلاس اپنے ایک کالم میں لکھتے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔نامور (ن) لیگی رہنماؤ ں میں سرانجام خان، راجہ اشفاق سرور اور راجہ محمد افضل شامل ہیں جنکے شریف برادران پر بڑے احسانات ہیں۔ ان تینوں میں سے سب سے اہم رہنما سرانجام خان تھے، وہ بہت پرانے مسلم لیگی تھے۔

جس وقت نواز شریف اور شہباز شریف اسکول جایا کرتے تھے، سرانجام خان اس وقت بھی ایک متحرک مسلم لیگی رہنما تھے۔ ایوبی دور میں وہ کونسل مسلم لیگ کے صوبائی صدر تھے، انہوں نے پشاور اور مردان میں محترمہ فاطمہ جناح کے جلسے کروائے۔ سرانجام خان کے آبائی علاقے مردان میں ہونے والے جلسے میں محترمہ فاطمہ جناح کے ساتھ بیگم خان قیوم بھی تھیں۔ اس جلسے میں میاں ممتاز دولتانہ، مولانا بھاشانی، محمد حسین چٹھہ بھی شریک ہوئے۔ سرانجام خان خوشگوار مزاج کے حامل بڑے وسیع القلب انسان تھے۔ اے این پی کے سربراہ اسفند یار ولی ان کے خالہ زاد بھائی ہیں۔ اسفند یار ولی کی سوتیلی ماں کا اُن کے ساتھ اچھا برتائو نہیں تھا۔ اسفند یار ولی کو تعلیم دلوانے میں ان کے خالہ زاد بھائی سرانجام خان کا کردار ہے۔ سرانجام خان زمیندار نے نہ صرف اسفند یار ولی کو ایچی سن کالج سے تعلیم دلوائی بلکہ ان کا پورا پورا خیال رکھا۔ ان دونوں خاندانوں کی پرانی رشتے داریاں بھی تھیں۔ سرانجام خان کی ایک بیٹی سلمیٰ عطااللہ کینیڈا میں سینیٹر ہیں۔ مسلم لیگی رہنما کے ایک داماد شکیل درانی وفاقی سیکرٹری اور چیئرمین واپڈا رہے۔ میری سرانجام خان سے زیادہ ملاقاتیں مسلم لیگ (ن) کے دورِ ابتلا میں ہوئیں، ہم اسلام آباد میں اکثر محفل سجا لیا کرتے تھے، اس وقت مسلم لیگ (ن) میں سرانجام خان جتنا دلیر کوئی نہ تھا، وہ مسلم لیگ (ن) کے مرکزی سیکرٹری جنرل تھے، ان پر بڑا پریشر تھا کہ وہ نواز شریف کی پارٹی کو اِدھر اُدھر کر دیں مگر وہ چٹان کی طرح آمریت کے سامنے ڈٹ گئے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *