آپ نے پھر اسے کیا نصیحت کی ؟

ﺍﯾﮏ ﻏﺮﯾﺐ ﻋﻮﺭﺕ ﺣﻀﺮﺕ ﺑﺎﺑﺎ ﻓﺮﯾﺪ ﺍﻟﺪﯾﻦ ﻣﺴﻌﻮﺩ ﮔﻨﺞ ﺷﮑﺮ ﺭﺣﻤﺘﻪ ﺍﻟﻠﻪ ﻋﻠﯿﻪ ﮐﮯ ﭘﺎﺱ ﺁﺋﯽ ﺍﻭﺭ ﺍﭘﻨﯽ ﻣﻔﻠﺴﯽ ﮐﯽ ﺷﮑﺎﯾﺖ ﮐﯽ ، ﺍﺱ ﮐﯽ ﺑﯿﭩﯿﺎﮞ ﺷﺎﺩﯼ ﮐﯽ ﻋﻤﺮ ﮐﻮ ﭘﮩﻨﭻ ﮔﺌﯽ ﺗﮭﯿﮟ ﻟﯿﮑﻦ ﺍﺱ ﮐﮯ ﭘﺎﺱ ﮐﻮﺋﯽ ﻣﺎﻝ ﺍﺳﺒﺎﺏ ﻧﻪ ﺗﮭﺎ۔ ﺑﺎﺑﺎ ﺟﯽ ﻧﮯ ﺍﺳﮑﯽ ﺑﺎﺕ ﺳﻨﯽ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﮐﯿﻠﺌﮯ ﺩﻋﺎ ﻓﺮﻣﺎﺋﯽ۔

ﻟﯿﮑﻦ ﻭﻩ ﻋﻮﺭﺕ ﺑﺎﺑﺎ ﺟﯽ ﺳﮯ ﮐﭽﮫ ﻟﯿﻨﮯ ﭘﺮ ﺑﻀﺪ ﺭﻫﯽ۔ ﺑﺎﺑﺎ ﺟﯽ ﻧﮯ ﻓﺮﻣﺎﯾﺎ ، ﺑﯽ ﺑﯽ ! ﺳﺐ ﺧﺰﺍﻧﮯ ﺗﻮ ﺍﻟﻠﻪ ﮐﮯ ﻫﯿﮟ ﺍﺱ ﺳﮯ ﻣﺎﻧﮕﻮ، ﻣﯿﮟ ﺗﻮ ﺧﻮﺩ ﺍﺱ ﮐﺎ ﺍﯾﮏ ﺍﺩﻧﯽ ﺳﺎ ﻏﻼﻡ ﻫﻮﮞ۔ ﻟﯿﮑﻦ ﻭﻩ ﻋﻮﺭﺕ ﺑﻮﻟﯽ، ﺁﭖ ﺍﻟﻠﻪ ﮐﮯ ﻧﯿﮏ ﺑﻨﺪﮮ ﻫﯿﮟ ﻣﯿﮟﺁﭖ ﮐﮯ ﺩﺭ ﺳﮯ ﺧﺎﻟﯽ ﻧﮭﯿﮟ ﺟﺎﺅﮞ ﮔﯽ۔ ﺁﺧﺮ ﺟﺐ ﺍﺱ ﻋﻮﺭﺕ ﮐﺎ ﺍﺻﺮﺍﺭ ﺣﺪ ﺳﮯ ﺑﮍﮪ ﮔﯿﺎ ﺗﻮ ﺑﺎﺑﺎ ﺟﯽ ﻧﮯ ﻓﺮﻣﺎﯾﺎ، ﺍﭼﮭﺎ ﺟﺎﺅ ﺍﻭﺭ ﮐﻮﺋﯽ ﻣﭩﯽ ﮐﺎ ﮈﮬﯿﻼ ﺗﻼﺵ ﮐﺮ ﮐﮯ ﻻﺅ، ﻭﻩ ﻋﻮﺭﺕ ﻣﭩﯽ ﮐﺎ ﺍﯾﮏ ﮈﮬﯿﻼ ﺍﭨﮭﺎ ﻻﺋﯽ، ﺑﺎﺑﺎ ﻓﺮﯾﺪ ﺭﺣﻤﺘﻪ ﺍﻟﻠﻪ ﻋﻠﯿﻪ ﻧﮯ ﺗﯿﻦ ﻣﺮﺗﺒﮧ ﺳﻮﺭﻩ ﺍﺧﻼﺹ ( ﻗﻞ ﻫﻮ ﺍﻟﻠﻪ ﺍﺣﺪ ) ﭘﮍﮪ ﮐﺮ ﻣﭩﯽ ﭘﺮ ﺩﻡ ﮐﯿﺎ ﺗﻮ ﺍﻟﻠﻪ ﮐﯽ ﻗﺪﺭﺕ ﺳﮯ ﻭﻩ ﻣﭩﯽ ﺳﻮﻧﺎ ﺑﻦ ﮔﺌﯽ۔ ﺁﭖ ﺭﺣﻤﺘﻪ ﺍﻟﻠﻪ ﻋﻠﯿﻪ ﻧﮯ ﻭﻩ ﺳﻮﻧﺎ ﺍﺱ ﻋﻮﺭﺕ ﮐﮯ ﺣﻮﺍﻟﮯ ﮐﺮﺗﮯ ﻫﻮﺋﮯ ﻓﺮﻣﺎﯾﺎ، ﻟﻮ ﺑﯽ ﺑﯽ ! ﺍﺱ ﺳﮯ ﺍﭘﻨﯽ ﺑﭽﯿﻮﮞ ﮐﯽ ﺷﺎﺩﯼ ﮐﺎ ﺑﻨﺪﻭﺑﺴﺖ ﮐﺮﻭ۔ ﻭﻩ ﻋﻮﺭﺕ ﺷﮑﺮﯾﮧ ﺍﺩﺍ ﮐﺮﺗﯽ ﻫﻮﺋﯽ ﭼﻠﯽ ﮔﺌﯽ ﻟﯿﮑﻦ ﺳﻮﻧﺎ ﺑﻨﺎﻧﮯ ﮐﺎ ﻧﺴﺨﮧ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺩﻣﺎﻍ ﻣﯿﮟ ﺑﯿﭩﮫ ﮔﯿﺎ۔ ﮔﮭﺮ ﺟﺎ ﮐﺮ ﺍﺱ ﻧﮯ ﻣﭩﯽ ﮐﮯ ﮐﺌﯽ ﮈﮬﯿﻠﮯ ﺍﮐﭩﮭﮯ ﮐﺌﮯ ﺳﺎﺭﮮ ﮔﮭﺮ ﮐﻮ ﭘﺎﮎ ﺻﺎﻑ ﮐﯿﺎ ﺍﻭﺭ ﺧﻮﺷﺒﻮ ﺳﮯ ﻣﮩﮑﺎ ﺩﯾﺎ، ﻏﺴﻞ ﮐﺮ ﮐﮯ ﭘﺎﮎ ﺻﺎﻑ ﻟﺒﺎﺱ ﭘﮩﻨﺎ ﺍﻭﺭ ﺍﭘﻨﮯ ﻋﻤﻞ ﻣﯿﮟ ﺷﺪﺕ ﭘﯿﺪﺍ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﯿﻠﺌﮯ ﺍﺱ ﻧﮯ ﺗﯿﻦ ﮐﯽ ﺑﺠﺎﺋﮯ ﺗﯿﻦ ﺳﻮ ﺑﺎﺭ ﺳﻮﺭﻩ ﺍﺧﻼﺹ ﭘﮍﮬﯽ ﺍﻭﺭ ﻣﭩﯽ ﭘﺮ ﺩﻡ ﮐﯿﺎ، ﺍﺱ ﻋﻮﺭﺕ ﮐﺎ ﺧﯿﺎﻝ ﺗﮭﺎ ﮐﮧ ﺁﻥ ﮐﯽ ﺁﻥ ﻣﯿﮟ ﻣﭩﯽ، ﺳﻮﻧﮯ ﻣﯿﮟ ﺑﺪﻝ ﺟﺎﺋﮯ ﮔﯽ ﻟﯿﮑﻦ ﺍﯾﺴﺎ ﮐﭽﮫ ﻧﻪ ﻫﻮﺍ۔ﺍﺱ ﻋﻮﺭﺕ ﭘﺮ ﺟﻨﻮﻥ ﮐﯽ ﺳﯽ ﮐﯿﻔﯿﺖ ﺳﻮﺍﺭ ﻫﻮ ﮔﺌﯽ

ﻭﻩ ﺑﺎﺭ ﺑﺎﺭ ﺳﻮﺭﻩ ﺍﺧﻼﺹ ﭘﮍﮬﺘﯽ ﺍﻭﺭ ﻣﭩﯽ ﭘﺮ ﺩﻡ ﮐﺮﺗﯽ ﻟﯿﮑﻦ ﻣﭩﯽ، ﻣﭩﯽ ﻫﯽ ﺭﻫﺘﯽ۔ ﻭﻩ ﺗﯿﻦ ﺩﻥ ﺗﮏ ﺳﻮﺭﻩ ﺍﺧﻼﺹ ﭘﮍﮬﺘﯽ ﺭﻫﯽ ﻟﯿﮑﻦ ﺳﺐ ﺑﮯ ﺳﻮﺩ ﺭﻫﺎ، ﺁﺧﺮ ﻭﻩ ﻣﭩﯽ ﺍﭨﮭﺎ ﮐﺮ ﺑﺎﺑﺎ ﻓﺮﯾﺪ ﺭﺣﻤﺘﻪ ﺍﻟﻠﻪ ﻋﻠﯿﻪ ﮐﯽ ﺧﺪﻣﺖ ﻣﯿﮟ ﺣﺎﺿﺮ ﻫﻮﺋﯽ ﺍﻭﺭ ﺷﮑﻮﻩ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﮯ ﺍﻧﺪﺍﺯ ﻣﯿﮟ ﺑﻮﻟﯽ، ﺁﭖ ﻧﮯ ﻧﻪ ﻭﺿﻮ ﮐﯿﺎ ، ﻧﻪ ﻏﺴﻞ، ﻧﻪ ﻫﯽ ﺧﻮﺷﺒﻮ ﮐﺎ ﺍﮨﺘﻤﺎﻡ ﮐﯿﺎ ﺑﺲ ﺗﯿﻦ ﺑﺎﺭ ﺳﻮﺭﻩ ﺍﺧﻼﺹ ﭘﮍﮬﯽ ﺍﻭﺭ ﻣﭩﯽ ﺳﻮﻧﺎ ﺑﻦ ﮔﺌﯽ۔ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﻏﺴﻞ ﮐﯿﺎ، ﺧﻮﺷﺒﻮ ﻟﮕﺎﺋﯽ، ﮔﮭﺮ ﮐﻮ ﭘﺎﮎ ﺻﺎﻑ ﮐﯿﺎ، ﺍﻭﺭ ﺗﯿﻦ ﺩﻥ ﺳﮯ ﺳﻮﺭﻩ ﺍﺧﻼﺹ ﭘﮍﮪ ﺭﻫﯽ ﻫﻮﮞ ﻟﯿﮑﻦ ﻣﭩﯽ ﺳﻮﻧﺎ ﻧﮭﯿﮟ ﺑﻨﺘﯽ، ﺑﺘﺎﺋﯿﮟ ﻣﯿﺮﮮ ﻋﻤﻞ ﻣﯿﮟ ﮐﯿﺎ ﮐﻤﯽ ﻫﮯ ؟ ﺑﺎﺑﺎ ﻓﺮﯾﺪ ﺭﺣﻤﺘﻪ ﺍﻟﻠﻪ ﻋﻠﯿﻪ ﮐﯽ ﺁﻧﮑﮭﯿﮟ ﻧﻢ ﻫﻮ ﮔﺌﯿﮟ۔ ﺁﭖ ﺭﺣﻤﺘﻪ ﺍﻟﻠﻪ ﻋﻠﯿﻪ ﻧﮯ ﺳﺮ ﺟﮭﮑﺎ ﻟﯿﺎ ﺍﻭﺭ ﺑﮭﯿﮕﮯ ﻫﻮﺋﮯ ﻟﮩﺠﮯ ﻣﯿﮟ ﻓﺮﻣﺎﯾﺎ، ﺗﯿﺮﮮ ﻋﻤﻞ ﻣﯿﮟ ﮐﻮﺋﯽ ﮐﻤﯽ ﻧﮭﯿﮟ ﺗﮭﯽ، ﺑﺲ ﺗﯿﺮﮮ ﻣﻨﻪ ﻣﯿﮟ ﻓﺮﯾﺪ ﮐﯽ ﺯﺑﺎﻥ ﻧﮭﯿﮟ ﺗﮭﯽ۔ سبحان اللہ بے شک یہی وہ اللہ کے بندے تھے جو اللہ کے نزدیک انعام یافتہ قرار پائے۔ اِهْدِنَا الصِّرَاطَ الْمُسْتَقِيْمَصِرَاطَ الَّذِيْنَ اَنْعَمْتَ عَلَيْهِمْ. ’’(اے اللہ) ہمیں سیدھا راستہ دکھا ان لوگوں کا جن پر تو نے اپنا انعام فرمایا۔‘‘ یہ انعام یافتہ بندے کون ہیں۔ اس کی وضاحت خود قرآن مجید نے یہ کہہ کر فرمائی ہے : فَأُوْلَـئِكَ مَعَ الَّذِينَ أَنْعَمَ اللّهُ عَلَيْهِم مِّنَ النَّبِيِّينَ وَالصِّدِّيقِينَ وَالشُّهَدَاءِ وَالصَّالِحِينَوَحَسُنَ أُولَـئِكَ رَفِيقًا ’’تو یہی لوگ (روز قیامت) ان کے ساتھ ہوں گے جن پر اللہ نے (خاص) انعام فرمایا ہے جو کہ انبیاء، صدیقین، شہداء اور صالحین ہیں اور یہ بہت اچھے ساتھی ہیں۔‘‘.

Sharing is caring!

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *