اگلے انتخابات الیکٹرونک ووٹنگ مشینوں سے کرانے کا معاملہ شدت اختیار کر گیا ،

اسلام آباد (ویب ڈیسک) پاکستان ڈیمو کریٹک موومنٹ نے جمعے کو مولانا فضل الرحمٰن کی سربراہی میں ہونے والے اجلاس میں حکومت کیخلاف ایک بار پھر بھرپور طریقے سے احتجاجی تحریک عندیہ ہے دیتے ہوئے کہا کہ اگر حکومت نے الیکٹرانک ووٹنگ مشین کے معاملے پر مرضی کی تو آئندہ عام انتخابات کا بائیکاٹ کرسکتے ہیں،

احتجاجی تحریک کے دوران چاروں صوبائی دارالحکومتوں اور اسلام آباد میں دھرنا دیئے جانے کا امکان ہے۔ تفصیلات کے مطابق الیکٹرانک ووٹنگ مشین کے معاملے پر حکومت اور الیکشن کمیشن کے درمیان پیدا ہونے تنازعے کے بعد اپوزیشن اتحاد نے بھی حکومت کیخلاف محاذ کھولنے کی تیاریاں شروع کر دیں۔ اطلاعات کے مطابق پی ڈی ایم میں شامل اپوزیشن جماعتوں نے آئندہ عام انتخابات کا بائیکاٹ کرنے کیلئے مشاورت شروع کر دی ہے اور جمعے کو اسلام آباد میں ہونے والے سربراہی اجلاس میں اس حوالے سے تفصیلی تبادلہ خیال ہوا۔ ذرائع کے مطابق پی ڈی ایم جماعتوں کے رہنماوں کی جانب سے موقف اختیار کیا گیا ہے کہ اگر حکومت نے الیکٹرانک ووٹنگ مشین کے استعمال کے معاملے پر من مرضی کی کوشش کی، تو اس صورت میں عام انتخابات کا بائیکاٹ کیا جائے۔ اس حوالے سے حتمی فیصلہ نواز شریف اور دیگر رہنماوں کی مشاورت کے بعد کیا جائے۔ انتخابات کے بائیکاٹ کے علاوہ پی ڈی ایم جماعتوں کی جانب سے حکومت کیخلاف احتجاج بھی شروع کرنے پر غور کیا جا رہا ہے۔ پی ڈی ایم کی جانب سے چاروں صوبائی دارالحکومتوں اور اسلام آباد میں دھرنا دیئے جانے کا امکان ہے، اس حوالے سے حتمی اعلانات آئندہ چند روز میں متوقع ہیں۔ دریں اثناء اجلاس کے بعد پاکستان ڈیمو کرٹیک موومنٹ نے حکومت مخالف تحریک کے سلسلے میں حکمت عملی کا اعلان کرتے ہوئے کہا ہے کہ پی ڈی ایم کے پلیٹ فارم سے حکومت کے خلاف وائٹ پیپر جاری کیا جائے گا ای وی ایم مشین مسلط کی گئی تو ہم حتمی فیصلے کا اعلان کریں گے جلسوں کے انعقاد کے بعد روڈ کاررواں اور پھر لانگ مارچ ہوگاہم مشترکہ اجلاس میں جائینگے اور احتجاجا واک آٹ کریں گے26 ستمبر کو اسلام آباد میں کنونشن جبکہ اکتوبر میں مختلف شہروں میں جلسے کئے جائیں پی ڈی ایم کی مجلس عاملہ کے اجلا س کی صدرات مولانافضل الرحمان نے کی جبکہ شاہد خاقان عباسی، احسن اقبال مریم اورنگزیب، آفتاب شیرپائو، محمود اچکزئی، اکرم درانی اور دیگر رہنمایوں نے شرکت کی۔ اجلاس کے بعد ترجمان حافظ حمد اللہ نے میڈیا سےگفتگو کرتے ہوئے کہا کہ ایک ہفتے بعد پی ڈی ایم کا اجلاس ہو گا۔ اس میں روڈ کاروان اور اسلام آباد مارچ کا اعلان ہو گا۔ حکومت کی نالائقی اور ناکامی کو آشکار کیا جائے گا۔اس ہفتے کے آخر میں حکومت کی سیاہ کاریوں کو عوام کے سامنے رکھیں گے انھوں نے کہا کہ ہم اس حکومت کو غیر آئینی سمجھتے ہیں پی ڈی ایم نے حکومت کی یکطرفہ اصلاحات اور ای وی ایم کو مسترد کر دیا ہے۔ دھاندلی کا ایک منصوبہ ہے پی ڈی ایم ناجائز طریقے سے حکمرانی کی اجازت نہیں دے گی۔ موجودہ نالائق حکومت کی سیاہ کاریوں اور ناکامیوں کو آشکار کیا جائیگاعوام کو حقائق سے اس وائٹ پیپر کے ذریعے آگاہ کرینگے ۔

Comments are closed.