اہم کیس کی سماعت کے دوران جسٹس قاضی فائز عیسیٰ کے ریمارکس

اسلام آباد(ویب ڈیسک) الیکشن کمیشن آف پاکستان نے ملک میں بلدیاتی انتخابات کا شیڈول سپریم کورٹ میں جمع کروادیاجبکہ بلدیاتی انتخابات سے متعلق کیس پر سماعت کے دوران جسٹس قاضی فائز عیسی نے پنجاب حکومت کی جانب سے قبل از وقت مقامی حکومتیں تحلیل کرنے پر برہمی کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ

پنجاب حکومت نے بلدیاتی ادارے تحلیل کرکے جمہوریت کو ختم کر دیا، بلدیاتی انتخابات آئینی تقاضا ہیں، بلدیاتی انتخابات کی بات ہو تو صوبے اپنے مسائل گنوانا شروع کردیتے ہیں، ہر مخالف غدار اور حکومتی حمایت کرنے والا محب وطن بتایا جا رہا ہے، بلدیاتی حکومت کو ختم کر کے پنجاب حکومت نے واضح آئین کی خلاف ورزی کی، ملک کو منظم طریقے سے تباہ کیا جا رہا ہے۔پنجاب حکومت نے بلدیاتی ادارے کیوں تحلیل کئے گئے، کوئی وجہ تو ہوگی، اداروں کو اپنی مدت پوری کرنی چاہیے، کیا پنجاب حکومت نے لوکل گورنمنٹ ختم کرکے بیک ڈور مارشل لا لگایا، مارشل لا کے دور میں تو ایسا ہوتا تھا لیکن جمہوریت میں ایسا کبھی نہیں سنا، کیا پنجاب لوکل گورنمنٹ ختم کرنے کا موڈ بن گیا تھا؟۔جمعرات کو جسٹس قاضی فائز عیسیٰ کی سربراہی میں سپریم کورٹ کے 2رکنی بینچ نے ملک میں بلدیاتی انتخابات سے متعلق کیس پر سماعت کی۔ جسٹس قاضی فائز عیسی نے کہا کہ ہر مخالف غدار اور حکومتی حمایت کرنے والا محب وطن بتایا جا رہا ہے۔ بلدیاتی انتخابات سے متعلق کیس کی سماعت کے دوران جسٹس قاضی فائز عیسیٰ نے ریمارکس دیے کہ ملک کو منظم طریقے سے تباہ کیا جا رہا ہے،بلدیاتی انتخابات سے متعلق سپریم کورٹ میں کیس کی سماعت کے دوران اٹارنی جنرل خالد جاوید خان نے کہا کہ مردم شماری 2017 میں ہوئی لیکن ابھی تک حتمی نوٹی فیکشن جاری نہ ہو سکا جس پر جسٹس قاضی فائز عیسی نے استفسار کیا کہ کیا2017کے بعد سب سو گئے تھے؟اٹارنی جنرل نے کہا کہ مردم شماری پر سندھ اور دیگر کے اعتراضات ہیں، مردم شماری پر اعتراضات پر وفاقی حکومت نے کمیٹی بنا دی ہے، سندھ میں 5 فیصد بلاکس پر دوبارہ مردم شماری کرائی جائے گی، مردم شماری کے نتائج پر ایم کیو ایم کے بھی اعتراضات تھے۔جسٹس قاضی فائز عیسی نے کہا کہ بلدیاتی انتخابات آئینی تقاضا ہیں جس پر ایڈیشنل ایڈووکیٹ جنرل پنجاب نے کہا کہ پنجاب لوکل گورنمنٹ کا نیا قانون بنا دیا گیا ہے،جسٹس فائز عیسی نے ریمارکس دیے کہ مجھے یہ کہنے میں عار نہیں کہ ملک میں میڈیا آزاد نہیں ہے، ملک میں میڈیا کو کیسے کنٹرول کیا جا رہا ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ ملک کو منظم طریقے سے تباہ کیا جا رہا ہے کیونکہ جب میڈیا تباہ ہوتا ہے تو ملک تباہ ہوتا ہے۔جسٹس مقبول باقر نے ریمارکس دیے کہ ججز کو ایسی گفتگو سے احتراز کرنا چاہیے لیکن کیا کریں ملک میں آئیڈیل صورتحال نہیں ہے، کب تک خاموش رہیں گے،جسٹس قاضی فائز عیسی نے کہا کہ ہر مخالف غدار اور حکومتی حمایت کرنے والا محب وطن بتایا جا رہا ہے ڈیفنس میں رہنے والوں کے ایشو نہیں، کچی آبادی والوں کے مسائل ہوتے ہیں۔

Sharing is caring!

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *