ایک دوسرے پر الزامات کی بھر مار

کراچی(ویب ڈیسک) این اے 249 کے نتائج سامنے آنے پر مسلم لیگ (ن) اور پاکستان پیپلز پارٹی آمنے سامنے آگئے، بلاول بھٹو زرداری اور مریم نواز کے ایک دوسرے پر الزامات عائد کیے ہیں۔ مسلم لیگ (ن)کی نائب صدر مریم نواز کا کہنا ہے کہ حلقہ این اے 249کا نتیجہ چوری کیا گیا ،

الیکشن کمیشن متنازع نتائج روکے، ہار تب مانیں گے جب ہرایا جائیگا، شیر کا شکار آسان نہیں رہا۔بلاول بھٹو نے مریم نواز پر تنقید کرتے ہوئے کہا کہ انکا شوق ہے اپوزیشن سے اپوزیشن کرنا، انکا شوق ہے پیپلز پارٹی سے مقابلہ کرنا ، تو کرو اور ہارو، اسٹیبلشمنٹ، پہلے اور دوسرے سلیکٹڈ سب سے لڑنے کو تیار ہیں۔مسلم لیگ (ن) کے صدر شہباز شریف نے کہا کہ مفتاح اسماعیل کی برتری کیسے کم ہوئی، سب نے دیکھا،یقین ہے الیکشن کمیشن شفافیت کے تقاضے پورے کریگا، شازیہ مری نے کہا کہ تحریک انصاف کی شکست پر ن لیگ کی بوکھلاہٹ سوالیہ نشان ہے، پی پی کے کامیاب امیدوار قادر مندوخیل نے کہا کہ عمران خان کو کراچی کی عوام نے رد کردیا، ثابت ہوگیا 2018میں ووٹ چوری ہوئے، جبکہ چوہدری منظور نے کہا کہ جھوٹے شیر اپنی شکست کو دھاندلی کی آڑ میں چھپانا بند کریں۔ مریم نواز کا کہنا تھا کہ الیکشن کمیشن کو متنازع الیکشن کے نتائج کو روکنا ہوگا، مسلم لیگ (ن) سے صرف چند سو ووٹوں سے الیکشن چوری ہوا تاہم نتائج نہ بھی روکے تو یہ فتح عارضی ہوگی۔ ان کا کہنا تھا کہ جلد ہی یہ سیٹ مسلم لیگ(ن)کو واپس ملے گی، عوام کے ووٹ چوری کرنے والے جلد آپ کے کٹہرے میں کھڑے ہونگے۔انھوں نے کہا ہے کہ مسلم لیگ (ن)ہار تب تسلیم کرے گی جب اس کو ہرایا تو جائے،شیر کو ہرانے کے لیے جو ہتھکنڈے آپ نے آزمائے ان کی داستان بھی سامنے آنے والی ہے انتظار فرمائیے اور یاد رکھیے۔ اپنے بیان میں انہوں نے کہا کہ مسلم لیگ (ن) اپنا اور این اے249کے عوام کا حق واپس لے کے رہے گی۔پیپلز پارٹی کے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری این اے 249 ضمنی الیکشن میں دھاندلی کا شور مچانے والوں پر برس پڑے اور کہا کہ ایک تیر سے شیر سمیت کئی شکار کیے،ان کا شوق ہے مقابلہ کرنا ، تو کرو اور ہارو، ن لیگ کا ردعمل انتہائی بچگانہ ہے، دھاندلی کے ثبوت ہیں تو سامنے لائیں ورنہ خاموش ہوجائیں۔

Sharing is caring!

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *