باغی رہنماء نے فیصلہ سُنا دیا

کوئٹہ (نیوز ڈیسک ) سابق وفاقی وزیر لیفٹیننٹ جنرل ریٹائرڈ عبدالقادر بلوچ نے پاکستان مسلم لیگ ن میں واپسی کو رد کردیا ۔

انہوں نے کہا ہے کہ نہ مجھے واپس جانے کی خواہش ہے اور نہ انہیں میری ضرورت ہے ، جب کہ نواب ثناء اللہ زہری ن لیگ خیرباد کہنے یا اس جماعت کو نہ چھوڑنے کے بارے میں خود بہتر بتا سکتے ہیں ۔تاہم وہ ن لیگ کے ٹکٹ پر رکن بلوچستان اسمبلی ہیں ، جس کی بناء پران کے لیے پارٹی چھوڑنا اتنا اسان نہیں ہوگا ۔

نجی ٹی وی چینل سے گفتگو میں سابق وفاقی وزیر لیفٹیننٹ جنرل ریٹائرڈ عبدالقادر بلوچ نے کہا کہ رواں ماہ 7 نومبر کو کوئٹہ میں واقع ایم پی اے ہاسٹل میں پارٹی عہدیداروں ہم خیال ساتھیوں ، اور اپنے کارکنوں کا ایک اجلاس بلایا ہے ، جس میں مستقبل کے لائحہ عمل پر تبادلہ خیال کیا جائے گا۔اس ضمن میں قابل ذکر بات یہ ہے کہ پاکستان مسلم لیگ ن نے بھی فیصلہ کرلیا ہے کہ صوبہ بلوچستان میں ان کی جماعت کی خالی جگہوں کو نئے چہرے سامنے لاتے ہوئے پر کیا جائے گا ۔تاکہ خاص طور پر جنرل ریٹائرڈ عبدالقادر بلوچ کی طرف سے سیاسی جماعت چھوڑنے کی وجہ سے پیدا ہونے والے خلا کو پورا کیا جا سکے ، جنرل بلوچ نے پی ڈی ایم کے جلسے میں نمایاں کردار ادا کیا تھا ، تاہم ان کی با اثر افراد سے ملاقات کے بعد انہوں نے 7 نومبر کو اہم اعلان کرنے کا کہا۔اس حوالے سے سینیٹ میں حزب اختلاف کے سربراہ ظفر الحق نے جنرل بلوچ کے فیصلے کو اچھی علامت قرار دیتے ہوئے کہا کہ اب پاکستان مسلم لیگ ن میں تروتازہ اور ذہین افراد شامل ہوں گے ، ان کا کہنا تھا کہ اب بلوچستان میں نئے چہرے آئیں گے اور خاص طور پر ایسے افراد آئیں گے جو بلوچستان کی آواز کو درست معنوں میں بلند کر سکیں گے۔

Sharing is caring!

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *