بظاہر انتخابات میں 2 سال باقی مگر بلاول بھٹو زور و شور کے ساتھ سرگرم کیوں ؟

لاہور (ویب ڈیسک) نامور کالم نگار ایم ابراہیم خان اپنے ایک کالم میں لکھتے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔ایک طرف تو یہ معاملہ ہے کہ حکمران سسٹم سے کماحقہٗ واقف نہ ہونے کی بنیاد پر اپنے حصے کا کام نہیں کر پارہے اور مختلف پریشر گروپس کے ہاتھوں پریشرائز ہو رہے ہیں اور دوسری طرف پاکستان پیپلز پارٹی کے چیئرمین

بلاول بھٹو زرداری کا کہنا ہے کہ حکومت کے خلاف لانگ مارچ کی پوری تیاری ہے! اپوزیشن جیسے ہی تیار ہوئی، عدم اعتماد کی تحریک کامیابی سے ہم کنار ہو جائے گی۔ ملتان میں میڈیا کی سرکردہ شخصیات سے ملاقات کے دوران بلاول بھٹو زرداری نے کہا ”شہباز شریف قائد حزب اختلاف کا کردار ادا نہیں کرسکے اور پاکستان ڈیمو کریٹک موومنٹ (پی ڈی ایم) نے بھی ہم سے ہی استعفے مانگنا شروع کردیے جس کے باعث اپوزیشن کے اتحاد میں دراڑیں پڑیں۔ جب بھی شہباز شریف کا کوئی بیان آیا‘ پیچھے سے آواز آئی یہ اُن کا ذاتی فیصلہ ہے۔ پارٹی صدر کی حیثیت سے ان کا فیصلہ حتمی ہونا چاہیے۔ پی ڈی ایم میں کنفیوژن دور کرنے کی ضرورت ہے۔ پیپلز پارٹی ہی پہلے پنجاب اور پھر قومی اسمبلی میں تحریک عدم اعتماد لائے گی!‘‘۔بلاول بھٹو کی باتوں سے تو یہ اندازہ ہوتا ہے گویا اپوزیشن تیار بیٹھی ہے حکومت کا تختہ الٹنے کے لیے۔ اگر واقعی ایسا ہے تو پھر تختہ اب تک الٹا کیوں نہیں جاسکا؟ کس بات کا انتظار کیا جا رہا ہے؟ پاکستان ڈیموکریٹک موومنٹ (پی ڈی ایم) کے پلیٹ فارم کو بروئے کار لاتے ہوئے حکومت کے خلاف محاذ کھڑا کرنے کی کوشش تو کی گئی تھی‘ یہ اور بات ہے کہ آپس کے اختلافات ہی نے معاملہ بگاڑ دیا۔ اپوزیشن متحد ہوکر اس پلیٹ فارم کو ڈھنگ سے بروئے کار لانے میں اب تک کامیاب نہیں ہوسکی تو اس کا بنیادی سبب یہ نہیں ہے کہ حکومت میں اتنا دم خم تھا کہ اُس نے معاملات کو قابو میں کرلیا۔ بات کچھ یوں ہے کہ

اپوزیشن اب تک اپنے ایجنڈے ہی کا تعین نہیں کر پائی۔ ہر بڑی جماعت کی یہی کوشش رہی کہ تحریک کا ڈول ڈال کر اپنے دورِ حکومت کے محاسبے سے بچا جائے۔ قوم جنہیں بڑا سمجھ کر یہ امید رکھتی ہے کہ وہ مسائل حل کرکے امن و استحکام اور خوش حالی کی راہ ہموار کریں گے‘ وہ اپنے مفادات کے تحت کوشش کے دائرے سے باہر نہیں نکل پارہے۔حکومت کی بساط لپیٹنے کی ہر کوشش نیم دِلی کے باعث اب تک ناکامی سے دوچار ہوئی ہے۔ اس کام کے لیے جس نوعیت کا بھرپور سیاسی عزم درکار ہے‘ وہ دور تک دکھائی نہیں دیتا۔ حال ہی میں کراچی میں پی ڈی ایم کے جلسے نے سب کچھ بیان کردیا۔ پاکستان پیپلز پارٹی اور مسلم لیگ (ن) کی راہیں بالکل الگ ہیں اور مولانا فضل الرحمن جو کچھ کر کے دکھانا چاہتے ہیں‘ وہ بھی ایک الگ دنیا ہے۔ ایسے میں حکومت کے خلاف کوئی بھی محاذ کیسے قائم کیا جاسکتا ہے؟ اور اگر کسی طور ایسا کوئی محاذ قائم کر بھی لیا جائے تو سوال یہ ہے کہ ڈٹ کرلڑنے کے لیے سرِ صف کون ہوگا؟ایک بڑی مشکل یہ ہے کہ اپوزیشن کو خود بھی اندازہ نہیں کہ اگر اُس نے حکومت کے خلاف کوئی بڑی تحریک چلائی اور وہ کوشش نمایاں حد تک کامیاب ہوگئی تو عوام کو دینے کے لیے اُس کے پاس ہے کیا۔ اپوزیشن کی جماعتیں بھی اقتدار کے مزے لُوٹتی رہی ہیں۔ اُن کے ادوار میں جو کچھ ہوا‘ وہ بھی کچھ زیادہ قابلِ فخر نہیں۔ عوام کو جو کچھ درکار ہے‘ وہ اِس وقت کسی بھی جماعت کے پاس نہیں۔

ایسے میں اگر پاکستان تحریکِ انصاف کی حکومت کی بساط لپیٹ بھی دی جائے تو کیا ہوگا؟ سوال متبادل کا ہے۔ اگر قوم کو موزوں ترین متبادل نہ ملے تو اکھاڑ پچھاڑ سے کیا حاصل؟جو کچھ حکومت نے اب تک کیا ہے اور کر رہی ہے‘ وہ قوم کی نگاہوں سے پوشیدہ نہیں۔ یہ سب کچھ زیادہ امید افزا نہیں مگر کیا کیجیے کہ قوم یہ بھی دیکھ چکی ہے کہ اپوزیشن کیا کرسکتی ہے۔ ایسے میں کسی بھی بڑی حکومت مخالف تحریک کی کامیابی کے بارے میں زیادہ پُرامید نہیں رہا جاسکتا۔ کسی بھی معاملے میں غیر معمولی حد تک پُرامید رہنے کی کوئی نہ کوئی ٹھوس بنیاد ہونی چاہیے۔ اس وقت اپوزیشن جو کچھ کر رہی ہے‘ اُسے دیکھتے ہوئے یہ سوچا بھی نہیں جاسکتا کہ وہ حکومت کو رخصت کرنے کے ایجنڈے پر متفق ہوسکتی ہے یا یہ کہ حکومت مخالف تحریک کی کامیابی کی صورت میں قوم کو کچھ دے سکتی ہے۔ قوم بھی یہ سوچنے پر مجبور ہے کہ حکومت کی تبدیلی سے جب کوئی بڑی، معنی خیز اور اُمید افزا صورتِ حال پیدا ہو ہی نہیں سکتی تو پھر اکھاڑ پچھاڑ کیوں کی جائے، کیوں اس بے مقصد مشق کا حصہ بنا جائے؟سوال حکومت کو گرانے یا بیشتر معاملات میں ناکام بنانے کا نہیں بلکہ قوم کو کچھ دینے کا ہے۔ اپوزیشن کے پاس کوئی ایجنڈا ہے نہ پروگرام۔ پی ٹی آئی کی حکومت کے لیے مشکلات پیدا کرنے کی صورت میں اگر اپوزیشن کچھ دے سکتی ہے تو آگے آئے۔ زبردستی کی ہلچل کس کام کی؟ ملک کے اپنے حالات کسی بڑی اکھاڑ پچھاڑ کی اجازت دیتے ہیں نہ بیرونی معاملات نے کچھ کرنے کی گنجائش چھوڑی ہے۔ کورونا کی وبا کے نتیجے میں نافذ کیے جانے والے لاک ڈاؤن کے نتیجے میں معیشت کا جو حال ہوا ہے‘ وہ کسی سے پوشیدہ نہیں۔ قوم اب تک لاک ڈاؤن کے شدید منفی اثرات سے نمٹنے کی جدوجہد میں مصروف ہے۔ ایسے میں حکومت مخالف تحریک کے ذریعے معاملات کو مزید تلپٹ کرنے کے کسی عمل میں عوام کو کوئی دلچسپی نہیں ہے۔ اپوزیشن اپنا شوق پورا کرنا چاہتی ہے‘ تو ضرور کرے مگر سب سمجھ رہے ہیں کہ اس مشق سے کچھ حاصل ہونے والا نہیں۔ کرنے کا کام یہ ہے کہ قوم کو خطے کی بدلتی ہوئی زمینی حقیقتوں سے ہم آہنگی پیدا کرنے کے لیے تیار کیا جائے۔ اس کام میں تاخیر کی کوئی گنجائش نہیں۔

Comments are closed.