بینظیر بھٹو نے بیٹے کی نوکری کی خاطر یہ نعرے لگانے والے جیالے کو کیا جواب دیا تھا ؟

لاہور (ویب ڈیسک) بھٹو کے ایک جیالے کی کہانی۔’اسیں بال کھڈائیے بی بی دے ۔ اسیں صدقے جائیے بی بی تے‘۔ ایک جیالا محترمہ بینظیر بھٹو کو پارٹی کیلئے اپنی خدمات گنوارہا تھا۔ ابھی وہ اپنے بچے کیلئے سرکاری نوکری کی غرض مدعا تک نہ پہنچا تھا کہ بی بی نے اسے ٹوکتے ہوئے کہا۔

نامور کالم نگار فاروق عالم انصاری اپنے ایک کالم میں لکھتے ہیں ۔۔۔۔۔۔ پھر تو تمہیں پارٹی کا مشکور ہونا چاہئے ۔ تمہیں موقعہ فراہم کیا گیا کہ تم پارٹی کیلئے کوئی کام کرسکو۔ پارٹی قائدین سے وفاداری کے باب میں ایم کیو ایم کے کارکن سب سے آگے ہیں ۔’ ہمیں منزل نہیں رہنما چاہئے ‘۔یہاں معاہدہ عمرانی والا تعلق عشق مجازی حقیقی سے کہیں آگے بڑھ گیا۔ منزل کی دھن میں دیوانے منزل سے آگے نکل گئے ۔ عمران خان بھی اللہ تعالیٰ سے کیا قسمت لے کر آئے ہیں کہ عمر بھر محبوب خلائق رہے ہیں۔ کالم میں صر ف سیاست کے کوچے کا ذکر ہوگا۔ معراج محمد خاں سے لے کر جسٹس وجیہہ الدین تک ، کتنے ہی نابغہ ء روزگار عمران خان کی جماعت میں شامل رہے ۔ ان میں سے اختلافات کے باعث جو الگ ہو ئے ، عمران خان کی دیانتداری کے وہ پھر بھی قائل رہے ۔ جسٹس وجیہہ الدین نے پچھلے دنوں ایک کہانی ٹویٹ کی ۔کسی ملک میں ایک بہت ایماندار لٹیرارہتا تھا۔وہ اپنے ساتھیوں کے ساتھ کاروائی ڈالنے جایا کرتا تھا۔ کامیاب واردات کے بعد وہ سارا لوٹا ہوا مال ایمانداری کے ساتھ اپنے ساتھی ڈاکوئوں میں تقسیم کر دیا کرتا ۔اپنے پاس ایک پھوٹی کوڑی بھی نہ رکھتا۔ اس کے سنگی ساتھی اسکی اسی ایمانداری کے باعث اس کی بہت عزت کرتے اور اس کے تمام خرچ اخراجات کا بوجھ بھی اٹھائے رکھتے۔ جسٹس وجیہہ الدین عرصہ ہوا تحریک انصاف چھوڑ کر ’عام لوگ اتحاد ‘ کے نام سے اپنی ایک الگ سیاسی جماعت بنائے بیٹھے ہیں۔ مزے کی بات ہے کہ ان کی ٹویٹ سے عیاں ہے کہ عمران خان کی دیانت کے وہ اب بھی قائل ہیں۔ سو ان دنوں ہر طرف عمران خان کی دیانت کا طوطی بول رہا ہے ۔عمران خان کی دیانت کا ہر طرف شور چرچا ہے ۔ کبھی کبھی تو ایسا لگتا ہے جیسے ملک بھر کے سارے سیاستدانوں میں وہی اکیلے ایماندار ہیں۔ حتیٰ کہ ان کی اپنی جماعت میں بھی ان کے سوا کوئی اورایماندار نہیں۔ اب کالم نگار بھی تھک چکے ہیں ملک بھر سے صرف ایک ہی بندے کو ایماندار لکھ لکھ کر ۔ اک ستم ظریف نے کہا ہے ۔’اَت خدا داویر ‘۔ یعنی کوئی چیز اپنی انتہا کو پہنچے بغیر فنا نہیں ہوتی ۔ ملک بھر میں اکیلے عمران خان نے اپنی ایمانداری کے باعث لوٹ مار کو نقطہ عروج تک پہنچنے سے روک رکھا ہے ۔ اب عمران خان کو بھی چاہئے کہ وہ In Good Faith چوری کریں تاکہ چوری لوٹ مار نقطہ عروج پر پہنچ کرفنا ہو جائے ۔ ہنسیے نہیں۔ اب یہی ایک علاج رہ گیا ہے ملک بھر سے لوٹ مار ختم کرنے کا۔

Comments are closed.