بی بی تمہاری آخری حد ہے کیا ۔۔؟؟

لاہور (ویب ڈیسک) 30 دسمبر کے اخبارات کہ بڑی خبرتھی : ’خواجہ آصف کو گرفتار کر لیا گیا‘…… کل شب جب ان کو گرفتار کیا گیا تھا تو نون لیگ کی بی بی مریم صفدر نے مطالبہ کیا تھا کہ ان کو (خواجہ صاحب کو) فوراً چھوڑ دیا جائے ورنہ ہم آخری حد تک جائیں گے…… نامور کالم نگار

اور پاک فوج کے سابق افسر لیفٹیننٹ کرنل (ر) غلام جیلانی خان اپنے ایک کالم میں لکھتے ہیں ۔۔۔۔۔۔بندہ پوچھے وہ آخری حد کیا ہے؟بہت سی ’آخریں حدیں‘ تو پہلے ہی مسلم لیگ پار کر چکی ہے۔ بی بی صاحبہ کو چاہیے، تھوڑا صبر کرلیں۔ ان کو عدالتوں سے ضمانت مل جائے گی۔ انہوں نے اگر اپنے 51لاکھ کے اثاثوں کو چند برسوں میں 22کروڑ میں بدل لیا ہے تو کیا ہوا؟ان کو بیرونِ ملک سے درہم و دینار مل رہے تھے۔ اگر ان کا ثبوت آج نہیں مل رہا تو آنے والے کل میں کوئی قطری شہزادہ ان کی مدد کو آ جائے گا…… اس موضوع پر آپ دیکھیں گے کہ اخباری کالموں کی بوچھاڑ اور ٹاک شوز کی بھرمار شروع ہو جائے گی…… کیا میں بھی اس دوڑ میں شریک ہو جاؤں؟……ایک اور ’بڑی خبر‘ یہ ہے کہ مفتی کفائت اللہ کے خلاف سنگین غداری کامقدمہ کیا جا رہا ہے جس کی سزا عمر قید اور موت ہے…… بندہ پوچھے مفتی صاحب نے کیا جرم کیا ہے؟ اگر فوج کو سنائی ہیں تو فوج نے پہلے تین مرتبہ کے سابق وزیراعظم کا کیا بگاڑ لیا ہے۔ مفتی صاحب کا تعلق جس پارٹی سے ہے اس کے پاس ’ڈنڈا بردار‘فورس ہے جو فوج کی فورس کو نشانے پر رکھ لے گی۔ یہی مفتی صاحب اور ان کے باقی دوست تھے جو چند روز سے تقاضا کر رہے تھے کہ اگر جرات ہے تو مولانا فضل الرحمن کو گرفتار کرکے دکھاؤ؟ مولانا صاحب پر کیا منحصر اختر مینگل ہو یا اچک زئی ہو وہ شب و روز فوج کو لتاڑتے رہتے ہیں۔ بندہ کہاں تک پوچھتا رہے……کوئی اور ملک ہوتا تو آج حالات مختلف ہوتے۔ ہم نے تو اپنا لگایا ہوا باغ خود اجاڑنے کا تہیہ کر رکھا ہے۔ مولاناؤں کو چھیڑنا، غالب کو چھیڑنا ہے جس نے کہہ رکھا ہے:غالب ہمیں نہ چھیڑ کہ پھر جوشِ اشک سے۔۔بیٹھے ہیں ہم تہیہء طوفاں کئے ہوئے۔۔

Comments are closed.