بی بی سی کی اہم خبر

لاہور (ویب ڈیسک) کالعدم تحریک لبیک پاکستان اور وفاقی حکومت کے مابین تحریکِ لبیک کی لانگ مارچ کے حوالے سے بنائی گئی کمیٹی کا کہنا ہے کہ دونوں فریقوں کے درمیان معاہدہ طے پا چکا ہے تاہم معاہدے کی تفصیلات ابھی ظاہر نہیں کی گئیں۔اتوار کی دوپہر مفتی منیب نے ایک پریس کانفرنس

میں معاہدے کا اعلان کیا تاہم اس معاہدے کی تفصیلات و شرائط کے بارے میں آگاہ نہیں کیا۔ ان کا کہنا تھا کہ اس معاہدے کی شرائط ’مناسب وقت پر سامنے آ جائیں گی۔‘حکومت کی جانب سے تحریکِ لبیک کے ساتھ مذاکرات کے لیے بنائی گئی کمیٹی کے اراکین وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی، پارلیمانی وزیر علی محمد خان اور سپیکر قومی اسمبلی اسد قیصر بھی اس موقعے پر موجود تھے۔دھرنے کے ختم ہونے کے حوالے سے مفتی منیب کا کہنا تھا کہ اس معاہدے کے اثرات جلد سب کے سامنے آجائیں گے۔میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے وزیرِ خارجہ شاہ محمود قریشی نے کہا کہ قومی سلامتی کے اجلاس نے مذاکرات کو ترجیح دینے کا فیصلہ کیا اور اسی مینڈیٹ کو ذہن میں رکھتے ہوئے مذاکرات کیے گئے۔مذاکرات ختم ہونے کے بعد فلاحی تنظیم سیلانی ویلفیئر ٹرسٹ کے سربراہ مولانا بشیر احمد کو ایک سیل بند لفافے میں مبینہ طور پر معاہدے کی کاپی لے جاتے ہوئے دیکھا جا سکتا تھا۔اطلاعات ہیں کہ مذاکراتی ٹیم معاہدے کی یہ کاپی لے کر وزیر آباد جا رہی ہے۔دوسری طرف وزیرِ اعظم کے معاونِ خصوصی برائے بین المذاہب ہم آہنگی علامہ طاہر اشرفی نے کہا ہے کہ تصادم ملک اور اس کے عوام کے مفاد میں نہیں تھا، اور یہ کہ تمام اختلافات کو پُرامن طریقے سے حل ہونا چاہیے۔وزیر آباد میں ٹی ایل پی کے دھرنے میں موجود صحافی آصف بٹ کے مطابق دھرنے میں سپیکر پر اعلانات ہوئے ہیں کہ جب تک مرکزی قیادت کی طرف سے حکومت کے ساتھ ہونے والے معاہدے کی تفصیلات نہیں بتائی جاتیں

اور دھرنا ختم کرنے کا حکم جاری نہیں کیا جاتا، اس وقت تک لانگ مارچ ختم نہیں ہو گا۔یاد رہے کہ کالعدم تحریکِ لبیک پاکستان لاہور سے وفاقی دارالحکومت اسلام آباد کی جانب ایک لانگ مارچ کر رہی تھی، اور ان کے اہم مطالبات میں ملک سے فرانسیسی صدر کی ملک بدری اور تنظیم کے سربراہ سعد رضوی کی رہائی تھے۔ اتوار کی صبح تک کالعدم تحریک لبیک پاکستان کا قافلہ وزیر آباد میں موجود تھا۔ نامہ نگار شہزاد ملک کے مطابق وزیرآباد میں موجود تحریک لبیک کے کارکنان کی تعداد کئی ہزار ہے۔مفتی منیب نے بتایا کہ جو معاہدہ قرار پایا اس میں جماعت کے امیر حافظ سعد رضوی کی بھی تائید و حمایت حاصل ہے۔ انھوں نے مزید کہا کہ یہ کسی کی فتح یا شکست نہیں ہے یہ انسانی جان کی حرمت کی فتح ہے۔اس سے قبل تحریک لبیک کے ایک ترجمان امجد رضوی نے بتایا تھا کہ حکومت اور ان کی جماعت کے درمیان ہونے والے مذاکرات میں حکومت نے ان کے مطالبات پر لچک دکھائی ہے جس میں فرانسیسی سفیر کا معاملہ بھی شامل ہے۔اس کے علاوہ تحریک لبیک کی مجلس شوریٰ کے رکن پیر عنایت الحق شاہ کے مطابق مذاکرات میں حکومت کو تجویز دی گئی تھی کہ فرانسیسی سفیر کی بے دخلی کے بارے میں قومی اسمبلی کی جو کمیٹی بنائی ہے ان کے نام سامنے لائے جائیں اور یہ کمیٹی اس بارے میں جو بھی فیصلہ کرے گی وہ ان کی جماعت کو منظور ہوگا۔امجد رضوی کے مطابق ان کی جماعت اور حکومتی نمائندوں کے درمیان مذاکرات راولپنڈی میں ہوئے تاہم انھوں نے اس مقام کا ذکر نہیں کیا جہاں پر یہ مذاکرات ہوئے ہیں۔اس سے قبل کالعدم تنظیم نے اپنے پریس ریلیز میں بتایا کہ تحریکِ لبیک کے قائدین نے جماعت کے سربراہ سعد رضوی کی قیادت میں یہ ملاقات کی تاہم حکومتی وزیر نے اس کی تصدیق نہیں کی تھی۔

Comments are closed.