تازہ ترین خبر

اسلام آباد(ویب ڈیسک)اسلام آباد میں امریکی سفارت خانے نے مسلم لیگ (ن) کے رہنما احسن اقبال کی جانب سے وزیراعظم عمران خان سے متعلق متنازع بیان کو آفیشل اکاؤنٹ کے ذریعے شیئر کرنے پرمعافی مانگ لی تاہم تحریک انصاف نے امریکی سفارتی مشن کی معافی مسترد کردی ‘وفاقی وزیرانسانی حقوق ڈاکٹر شیریں مزاری

کاکہناتھاکہ اتنی تاخیر کے بعد امریکی سفارتخانے کی وضاحت کافی نہیں ‘واضح ہو گیا سفارتخانے کا ٹوئٹر اکاؤنٹ ہیک نہیں کیا گیا۔آپ کا کسی خاص پارٹی کا ایجنڈا لیکر چلنا ناقابل قبول ہے ۔امریکی سفارت خانے میں کام کرنے والوں کی یہ حرکت قبول نہیں۔تفصیلات کے مطابق امریکی سفارت خانے نےٹوئٹر پر جاری پیغام میں کہا کہ گزشتہ رات سفات خانے کا سوشل میڈیا اکاؤنٹ بغیر اجازت کے استعمال ہوا، امریکی سفارت خانہ سیاسی پیغامات کو ری ٹوئٹ یا ان کی پوسٹنگ اور تشہیر نہیں کرتا‘ ہم غیرمتعلقہ پوسٹ کی وجہ سے پیدا ہونے والی الجھن پر معذرت خواہ ہیں۔خیال رہے کہ امریکی سفارت خانے کی جانب سے یہ معذرت سوشل میڈیا پر سامنے آنے والے شدید رد عمل کے بعد کی گئی ہے جس میں مسلم لیگ (ن) کے رہنما احسن اقبال کی جانب سے واشنگٹن پوسٹ کے ایک آرٹیکل کا اسکرین شاٹ ٹوئٹ کیا گیا تھا، جس میں بتایا گیا تھا کہ ‘ٹرمپ کی شکست دنیا بھر کے آمروں کے لیے ایک دھچکا ہے‘۔احسن اقبال نے بظاہر وزیراعظم عمران خان کا حوالہ دیتے ہوئے مذکورہ آرٹیکل ٹوئٹ کرتے ہوئے اپنے پیغام میں کہا تھا کہ ‘ہمارے پاس پاکستان میں ایک ایساشخص ہے ۔جلد اسے بھی باہر کا راستہ دکھایاجائے گا‘۔قبل ازیں ڈاکٹر شیریں مزاری نے احسن اقبال کے بیان کو ری ٹوئٹ کرنے پر امریکی سفارتخانے کو تنقیدکا نشانہ بناتے ہوئے اپنے بیان میں کہاکہ اب بھی امریکی سفارتخانہ ڈونلڈ ٹرمپ کے انداز میں کام کرتے ہوئے ایک سزایافتہ مفرور کی حمایت کرکے پاکستان کی اندرونی سیاست میں مداخلت کر رہا ہے۔ امریکی سفارتخانے کو سفارتی اصولوں کو یاد رکھنا چاہیے اگر یہ غلط ہے تووضاحت کریں ورنہ معافی مانگی جائے۔ ادھر گور نر سندھ عمران اسماعیل نے اپنے ایک پیغام میں کہا کہ امریکی سفارتخانہ نے وزیراعظم عمران خان سے متعلق توہین آمیز ریمارکس پر مشتمل ٹوئٹ کو ری ٹویٹ کیا۔یہ عمل سفارتی پروٹوکول کے خلاف ہے۔ امریکی سفارتخانہ کا ٹویٹر اکائونٹ ہیک ہونے پر فوری وضاحت سامنے آنی چاہئے اور پاکستان کی وزارت خارجہ کو اس حوالہ سے ضروری کارروائی کرنی چاہئے۔ساتھ ہی انہوں نے سفارتخانے سے معافی مانگنے کا مطالبہ بھی کیا۔معاون خصوصی ڈاکٹر شہباز گل نے امریکی سفارتخانے کے ری ٹوئٹ پر ردعمل دیتے ہوئے کہا کہ یہ انتہائی شرمناک ہے ، پہلی بارکسی سفارتخانے نے منتخب نمائندوں کی تذلیل کی، یہ نا قابل قبول ہے، امریکی سفارتخانے نے امریکی صدر،وزیر اعظم پاکستان پر توہین آمیز ٹوئٹ کیں۔

Sharing is caring!

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *