جوبائیڈن کا پاکستان کے ساتھ رویہ کیسا ہو گا ؟

واشنگٹن (ویب ڈیسک) امریکہ سے آنیوالی خبروں کے مطابق نئے امریکی صدر جو بائیڈن کی ٹیم میں 2 پاکستانی اور 20 بھارتیوں کو اہم عہدے مل گئے ہیں ، لیکن اہم بات یہ ہے کہ جوبائیڈن حکومت کا پاکستان کے ساتھ رویہ کیسا ہو گا ، نامور صحافی صابر شاہ اپنی ایک رپورٹ میں لکھتے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

نئے امریکی صدر کے اردگرد بھارتی نژاد افراد پاکستانیوں سے زیادہ ہیں ، نئی انتظامیہ میں 20بھارتیوں کو اہم عہدے ملے ہیں جن میں 2کشمیری بھی شامل ہیں۔ان عہدیداروں میں 17وائٹ ہاؤس کمپلیکس کا حصہ ہوں گے اور 3نیشنل کونسل میں شامل ہوں گے ، تاہم براک اوباما دور کے وہ عہدیدار جو بائیڈن نے نظر انداز کردیئے ہیں جو جن کے متعلق شبہ تھا کہ ان کے تنظیموں سے یا (بی جے پی) سے تعلقات ہیں۔ بھارتیوں کا خیال ہے کہ بھارتی تارکین وطن کے یہ بیٹے بیٹیاں دنیا کی سب سے بڑی طاقت کی سوچ بھارت کے حق میں کرنے کیلئے کردار ادا کریں گے۔ تاہم بائیڈن کی نئی ٹیم کے اہم ارکان کی پاکستان کیلئے رائے مثبت ہے اور بائیڈن کی ٹیم میں 2پاکستانی بھی شامل ہیں پاکستانی نژاد علی زیدی ماحولیات کے مشیر ہوں گے جبکہ سلمان احمد فارن پالیسی ٹیم کا حصہ ہوں گے ۔ جبکہ پاکستانی امریکیوں نے بھارتیوں کے مقابلے پاکستانی نژاد افراد کی تعداد کم رکھنے پر مایوسی کا اظہار کیا ہے ۔ دوسری جانب نئی دہلی اور سری نگر کے ایوانوں میں یہ بات زور وشور سے کی جانے لگی کہ ڈیموکریٹک حکومت کے تحت عالمی انسانی حقوق کے گروپس مقبوضہ کشمیر میں متحرک ہوسکتے ہیں۔ جب کہ کشمیری نژاد دو خواتین ماہرین کو جوبائڈن کی ٹیم میں شامل کیا جانا اس کی جانب اشارہ ہے۔ 

Comments are closed.