حج کرنے کی تاکید اور نہ کرنے پر وعید۔۔

اللہ تعالیٰ نے حج کی اہمیت وفرضیت اور تاکید میں یوں ارشاد فرمایا:”اور لوگوں کے ذمہ ہے کہ جو استطاعت (زادِ راہ‘امن )رکھے ‘وہ اللہ تعالیٰ ہی کے لیے بیت اللہ کا حج کرے اور جس نے انکار کیاپس اللہ تعالیٰ جہان والوں سے لاپرواہے“۔حج فرض ہے :سیّدنا ابوہریرہ رضی اللہ عنہ

سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے ہمیں خطبہ دیا اور فرمایا ”اے لوگو! تم پر حج فرض کیا گیا ہے ۔لہٰذا حج کرو“۔]مسلم [432واضح رہے کہ حج نوہجری کو فرض ہوا تھا۔]مرعاة المفاتیح[حج فرض ہوتو قرض ہےسیّدنا ابنِ عباس رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم سے ایک شخص نے پوچھا کہ میری ماں نے حج کرنے کی نذر مانی تھی لیکن وہ اسے پورا کرنے سے پہلے ہی فوت ہو گئی۔آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا ‘اگر اس کے ذمہ قرض ہوتا تو تُو اسے ادا کرتا؟اس نے کہا ہاں ۔تو آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا اللہ تعالیٰ کا قرض (حج )زیادہ حق رکھتا ہے کہ اسے ادا کیا جائے“۔]بخاری [250/1حج رُکن اسلام ہے:سیّدنا عبداللہ بن عمر رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ اسلام کی بنیاد پانچ ستونوں پر رکھی گئی ہے ۔کلمہ طیبہ کی شہادت ‘نماز ادا کرنا‘کوٰة دینا‘حج کرنا اور رمضان کے روزے رکھنا“۔]بخاری [6/1حج فضیلت والاعمل ہے :سیّدنا ابو ہریرہ رضی اللہ عنہ بیا ن کرتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم سے پوچھا گیا کہ اعمال میں سے افضل عمل کونسا ہے ؟تو فرمایا اللہ تعالیٰ اور اس کے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم پر ایمان لانا۔کہا گیا پھر کونسا؟فرمایا اللہ تعالیٰ کی راہ میں جہاد کرنا‘کہا گیا پھر کونسا؟تو فرمایا ”حج برور“۔]بخاری6/1 [ حج عمر میں صرف ایک مرتبہ فرض ہے:سیّدنا ابوہریرہ رضی اللہ عنہ سے مروی ہے کہ

رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے ایک مرتبہ خطبہ میں ارشاد فرمایا:”اے لوگو! اللہ تعالیٰ نے تم پر حج فرض کیا ہے ۔تم حج کرو۔ایک شخص نے پوچھا‘اے اللہ کے رسول صلی اللہ علیہ وسلم ! کیا ہر سال ؟آپ صلی اللہ علیہ وسلم خاموش رہے ۔یہاں تک کہ اس شخص نے تین مرتبہ اپنا سوال دہرایا ۔پھر آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا:اگر میں ہاں کہہ دیتا تو ہر سال حج کرنا فرض ہوجاتا اور تم اس کی طاقت نہ رکھتے “۔]مسلم 432/1 [حج کا ارادہ ہوتو جلدی کریں :سیّدنا ابن عباس رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا:جس شخص نے حج کا ارادہ کر لیا تو وہ جلدی کرے“۔]ابوداؤد [75/2دُعا کی فرمائش کریں حج یا عمرہ کے لیے جانے والے شخص سے دُعا کی درخواست کرنی چاہئے چنانچہ روایت ہے کہ سیّدنا عمر رضی اللہ عنہ نے ایک مرتبہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم سے عمرہ کے لیے اجازت طلب کی تو آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا:”کہ پیارے چھوٹے بھائی! اپنی دُعا میں مجھے نہ بھولنا“۔حج کا اَجر وثوابحج گناہوں کا کفارہ ہے:سیّدنا ابوہریرہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ میں نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم سے سنا‘آپ صلی اللہ علیہ وسلم فرماتے تھے کہ جس نے اللہ تعالیٰ کے لیے حج کیا اور اس میں کوئی فحش بات اور برائی کاکام نہ کیا تو وہ اس دن کی طرح (گناہوں سے پاک ہو کر)واپس لوٹے گا جس دن اسے اس کی ماں نے جنا تھا۔]بخاری [206/1حج کی جزاجنّت ہے:سیّدنا ابوہریرہ رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ رسو ل اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ ایک عمرہ دوسرے عمرہ تک درمیان کے گناہوں کے لیے کفارہ ہے اور حج مبرور(اطاعت و فرمانبرداری کرنے والے مقبول حج )کی جزاجنّت ہے ۔]بخاری238/1 [حج عورت کا جہاد ہے :سیّدہ عائشہ رضی اللہ عنہا نے نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم سے جہاد شرکت کی اجازت طلب کی تو آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا تمہار اافضل جہاد حج مبرور ہے ۔] بخاری250/1 [عمرہ گناہوں کو مٹا دیتا ہے :سیّدنا ابوہریرہ رضی اللہ عنہ سے مروی ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ ایک عمرہ دوسرے عمرہ تک درمیان کے گناہوں کو مٹا دیتا ہے ۔]بخاری238/1 [ماہ رمضان میں عمرہ کی فضیلت سیّدنا ابن عباس رضی اللہ عنہ کرتے ہیں کہ نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا کہ رمضان میں عمرہ حج کے برابر ہے یا میرے ساتھ حج کرنے کے برابر ہے ۔]بخاری 251/1 [

Comments are closed.