حکومت نے نیا طریقہ کار سامنے لانے پر غور شروع کردیا

کراچی (ویب ڈیسک)گورنرسٹیٹ بینک رضا باقر نے کہا ہے کہ ڈیجیٹل کرنسیز زیر غورہیں، مہنگائی کی رفتار توقعات کے مطابق، کر نسی مستحکم ہے، شرح سود بڑھانے کا فی الحال کوئی امکان نہیں۔سٹیٹ بینک کے گورنر رضا باقر نے ایک انٹرویو میں کہا سٹیٹ بینک کورونا کے معاشی چیلنجز سے نمٹنے کیلئے

جارحانہ، لچکدار اور اہداف پر مرکوز رہا، ہم نے کاروبار کو زبرد ست مالی معاونت فراہم کی جس کا حجم مجموعی پیداوار کا 5 فیصد رہا، اس کے علاوہ پالیسیوں پر نظر ثانی کرتے ہوئے لچک کا مظاہرہ کیا،بزنس کو جاری تعاون اہداف سے مشروط رکھا جس میں روزگار برقرار رکھنا اہم تھا۔مالی نظام میں شمولیت کے حوالے سے ان کا کہنا تھا پاکستان میں عوام کا بڑا حصہ بینکاری دائرہ کار سے باہر ہے، راست ڈیجیٹل پیمنٹ نظام کا مقصد ہے ملک میں ہر اس شخص کا بینک اکاونٹ ہو جو فون رکھتا ہو۔ راست کا نظام لانے کا مقصد نقد ادائیگی کے استعما ل کی حوصلہ شکنی کرنا ہے کیونکہ نقد ادائیگی کرپشن کو پروان دیتی ہے۔رضا باقر نے مزید کہا ڈیجیٹل کوائن کا اجرا بھی مالیاتی شمولیت میں اہم کر دار ادا کرسکتا ہے، مرکزی بینک اگر ڈیجیٹل کرنسی جاری کرتا ہے تو اس سے منی لانڈرنگ اور ٹیرر فناننسنگ کے سدباب میں بھی مدد ملے گی۔ گورنرسٹیٹ بینک کا کہنا تھا اگر عالمی موبائل پیمنٹ آپریٹر پاکستان میں آکر کاروبار کرنا چاہتے ہیں تو کھلے دل سے خوش آمدید کہیں گے۔

Sharing is caring!

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *