حیرت انگیز معلوماتی رپورٹ

لاہور (ویب ڈیسک) نامور صحافی علی عمران سید روزنامہ جنگ کے لیے اپنی ایک رپورٹ میں لکھتے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔ایک تخمینے کے مطابق صرف ایک کلو چینی تیاری میں تقریباً 45 ہزار لیٹر پانی خرچ ہوتا ہے لیکن پانی کے شدید بحران کے خطرے سے دوچار پاکستان میں

عام فصلوں کے مقابلے کئی گنا زائد پانی استعمال والی گنے کی فصل ترجیح حاصل کر چکی ہے۔ ایک تحقیق کے مطابق ایک ٹن گنے میں 4 ہزار کیوبک میٹر پانی لگتا ہے اور اگر 12 کلو گنے سے ایک کلو چینی کا حساب لیں تو تقریباً 45 ہزار لیٹرز پانی سے ایک کلو چینی تیار ہوتی ہے۔وزارت آبپاشی، واپڈا اور دیگر خرچوں کے ساتھ اگر پانی کا کم ترین خرچ یعنی صرف آدھا پیسہ فی لیٹر سے حساب لیں تو ایک کلو چینی پر پانی کا خرچ 225 روپے بنتا ہے۔ ۔دوگنا پانی استعمال کرنے کے باوجود پاکستان کی فی ہیکٹر پیداوار صرف 52 ٹن جب کہ دیگر ملکوں کی اس سے کہیں زائد ہے۔پاکستان میں شوگر کی لاڈلی فصل خوب پھل پھول رہی ہے جب کہ ناسا سیٹلائیٹ ایمیج سے ظاہر ہے کہ دریائے سندھ کے ساتھ بہت زیادہ زیر زمین پانی نکلنے سے زیر زمین پانی کی قلت والے خطے میں پاکستان شامل ہوچکا ہے۔

Sharing is caring!

Comments are closed.