سردیوں میں کورونا کی خوفناک ترین لہر آنے کی وارننگ جاری ۔۔۔عالمی ادارہ صحت سے تازہ ترین خبر

راچڈیل (ویب ڈیسک) عالمی ادارہ صحت نے متنبہ کیا ہے کہ موسم سرما میں کورونا وائرس کی دوسری لہر نے اگر جنم لیا تو اسکی تباہ کاریاں انتہائی خوفناک ہونگی جس سے پوری دنیا میں لاکھوں اموات ہو سکتی ہیں۔ ڈبلیو ایچ او میں اسٹریٹجک اقدامات کے اسسٹنٹ ڈائریکٹر جنرل ڈاکٹر رنیری گوریرا نے

100سال قبل پھیلنے والے ہسپانوی فلو سے کورونا وائرس کا موازنہ کرتے ہوئے کہا ہے کہ ستمبر اور اکتوبر میں ممکنہ طو رپر درجہ حرارت میں کمی کے ساتھ کورونا وائرس کی دوسری لہر جنم لے سکتی ہے۔ ہسپانوی فلو نے بھی ایک صدی قبل بالکل اسی انداز میں حملہ کیا تھا جس سے پچاس ملین کے قریب اموات ہوئی تھیں غیر ملکی ذرائع ابلاغ سے گفتگو کرتے ہوئے انہو ں نے کہا کہ ماضی میں ہسپانوی فلو گرمی میں نیچے اور موسم سرد ہونے پر دوبارہ آیا اس طرح کورونا وائرس بھی ممکنہ طو رپر ستمبر اور اکتوبر میں دوبارہ پھیل سکتا ہے یورپی سنٹرل بینک کی سربراہ کرسٹین لیگا رڈے بھی اسی طرح کے خدشات کا اظہار کر چکی ہیں دو یوم قبل انہوں نے کہا تھا کہ ہمیں ماضی کے ہسپانوی فلو سے سبق سیکھنے کی ضرورت ہے یقیناکورونا وائر س کی دوسری لہر بھی اثرانداز ہو سکتی ہے۔ ہسپانوی فلو کی وباء نے کورونا وائر س کی طرز پر پوری دنیا کو اپنی لپیٹ میں لیا متعدد ممالک میں تباہی مچائی اور مجموعی طو رپر ملینزافراد موت کے منہ میں چلے گئے کورونا وائر س پر تحقیق کرنیوالے محققین کا کہنا ہے کہ کورونا وائر س کی پچاس فارن ہائیٹ تک درجہ حرارت پر پھیلائو سست پڑ جاتا ہے تاہم مکمل طور پر خاتمے کیلئے وقت درکار ہوگا۔ کولمبیا یونیورسٹی کے میل مین اسکول آف پبلک ہیلتھ کی وبائی امراضیات کے ماہر ڈاکٹر جیسکا جسٹن نے کہا ہے کہ یہ اکثر بالکل واضح ہوتا ہے کہ پہلے گروپ میں انفیکشن کم ہونے کے بعد آپ لوگوں کے دوسرے گروہ میں اضافہ دیکھیں گےکورونا وائرس نے جہاں برطانیہ سمیت پوری دنیا کو نقصان پہنچایا وہیں انفیکشن کے حوالے سے برازیل بھی سب سے زیادہ متاثرہ ممالک میں سرفہرست ہے برازیل کے بعد امریکہ میں سب سے زیاد ہ اموات ریکارڈ کی گئی ہیں۔ برطانیہ میں کورونا وائر س کے باعث اموات کیساتھ معیشت کو زبردست نقصان پہنچا معیشت کی بحالی ‘ اور کورونا کی دوسری ممکنہ لہر سے بچائو کیلئے سائنسدانوں کی طرف سے حکومت کو ٹھوس حکمت عملی مرتب کرنے کا مشورہ دیا جا رہا ہے۔

Sharing is caring!

Comments are closed.