سینیٹ الیکشن کا معرکہ : کس کی جیت کے کتنے امکانات ہیں ؟

لاہور (ویب ڈیسک) سینیٹ کے 3مارچ کو48نشستوں پر ہونے والے انتخابات میں پاکستان تحریک انصاف اور اپوزیشن اتحاد پی ڈی ایم کے درمیان سب سے بڑا مقابلہ وفاقی دارالحکومت اسلام آباد کی جنرل نشست پر ہوگا. اس نشست پر پاکستان تحریک انصاف نے وزیراعظم کے معاون خصوصی ڈاکٹر عبدالحفیظ شیخ کو ٹکٹ دیا ہے.

ان کے مقابلے میں پی ڈی ایم نے پیپلز پارٹی کے سابق وزیراعظم سید یوسف رضا گیلانی کو میدان میں اتارا ہے۔ وفاق کی جنرل اور خواتین کیلئے مخصوص دونوں نشستوں پر حکمران اور اپوزیشن جماعتوں کے درمیان زبردست مقابلہ ہو گا۔ان کیلئے قومی اسمبلی کے 342ارکان ووٹ ڈالیں گے. وفاقی دارالحکومت کی نشستوں کے انتخابی نتائج سے حکومت اور اپوزیشن کی سیاسی قوت ظاہر ہوگی۔ قومی اسمبلی کے 342کے ایوان میں حکمران اتحاد کے ایم این ایز کی مجموعی تعداد 180جبکہ پی ڈی ایم میں شامل جماعتوں کے ارکان کی 158ہے.ایک رکن کا تعلق جماعت اسلامی سے ہے، اس کے علاوہ مسلم لیگ (ن) پیپلز پارٹی اور جے یو آئی کے ارکان قومی اسمبلی کے انتقال سے خالی نشستوں پر ضمنی انتخاب ہورہے ہیں جن کے نتائج سینٹ الیکشن سے قبل آجائیں گے۔اس وقت حکمران پی ٹی آئی اور اس کی اتحادی جماعتوں اور پی ڈی ایم میں شامل جماعتوں مسلم لیگ (ن ) پیپلز پارٹی جے یو آئی بی این پی مینگل اے این پی اور پی ٹی ایم کے اراکین کی مجموعی تعداد میں صرف 22 کا فرق ہے.جماعت اسلامی اور ضمنی انتخابات میں کامیاب امیدواروں کے چار ووٹ بھی بڑی اہمیت کے حامل ہوں گے، یہی وجہ ہے کہ پی ٹی آئی اور اپوزیشن جماعتیں ضمنی انتخابات میں اپنے امیدواروں کی کامیابی کے لئے تمام وسائل بروئے کار لا رہی ہیں۔پی ڈی ایم کے امیدوار سید یوسف رضا کی کامیابی کیلئے پیپلز پارٹی اور مسلم لیگ (ن) کی اعلیٰ قیادت کے علاوہ پی ڈی ایم کے سربراہ مولانا فضل الرحمٰن اور تین سابق وزرائے اعظم شاہد خاقان عباسی، راجہ پرویز اشرف اور خود امیدوار سید یوسف رضا گیلانی ارکان قومی اسمبلی سے رابطے کر رہے ہیں جبکہ وزیراعظم عمران خاں اپنے رفقاء کار اور اتحادی جماعتوں مسلم لیگ (ق) ایم کیو ایم، جی ڈی اے، جمہوری وطن پارٹی اور عوامی مسلم لیگ کے قائدین کی مشاورت سے حکمت عملی طے کر رہے ہیں کیونکہ سینیٹ کا الیکشن موجودہ طریقۂ کار (خفیہ رائے شماری) سے ہونے کی صورت میں ہارس ٹریڈنگ اور اپ سیٹ خارج اَز امکان نہیں ہے۔صرف ایک درجن ووٹوں کے ادھر ادھر ہونے سے پانسہ پلٹ سکتا ہے سابق وزیراعظم یوسف رضا گیلانی ایک مضبوط امیدوار ہیں ان کے بڑے سیاسی خاندانوں اور کئی حکومتی اور اپوزیشن اراکین سے ذاتی تعلقات بھی ہیں جبکہ حکومتی امیدوار ڈاکٹر عبدالحفیظ شیخ کے بھی پیپلز پارٹی کے بعض اراکین سے رابطے ہیں. 172ووٹ لینے والا جیت سکتا ہے۔

Sharing is caring!

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *