صف اول کے پاکستانی تجزیہ کاروں کی آراء پر مشتمل خبر

کراچی (ویب ڈیسک)نجی ٹی وی کے پروگرام میں تجزیہ کار عمران خان کا کہنا تھا کہ نواز شریف جو گیم کھیل رہے ہیں وہ بہت خطرناک ہے، واضح طور پر کہتا ہوں بھارت ان کی مدد کررہا ہے! کیا وزیراعظم کا الزام درست ہے؟ کا جواب دیتے ہوئے تجزیہ کاروں نے کہا کہ وزیراعظم کا

نواز شریف پر بھارت کی مدد لینے کا الزام درست نہیں، نوازشریف نے ایسی کوئی بات نہیں کی جو وزیراعظم بننے سے پہلے عمران خان نے نہ کی ہو۔مظہر عباس نے کہا کہ وزیراعظم کا نواز شریف پر بھارت کی مدد لینے کا الزام درست نہیں ہے، عمران خان کے پاس نواز شریف کیخلاف ثبوت ہیں تو ان پر غداری کا مقدمہ قائم کردیں، نواز شریف کے بیانات سے کوئی ملک فائدہ اٹھالے یہ مختلف بات ہے، اگر تین مرتبہ وزیراعظم رہنے والے کو بغیر شواہد پاکستان کیخلاف سازش کرنے والا کہیں گے تو پھر بات کہیں نہیں رکے گی۔عمران خان نے جس جمہوریت کی آغوش میں آنکھ کھولی انہیں اندازہ ہی نہیں کہ اس جمہوریت کیلئے کن لوگوں نے کتنی قربانیاں دی ہیں، عمران خان کو شکر ادا کرنا چاہئے کہ ان لوگوں کی قربانیوں کے نتیجے میں جیسی تیسی ڈھیلی ڈھالی جمہوریت آچکی تھی، وہ لوگ خوش نصیب نہیں تھے جنہوں نے آمریت کی آغوش میں آنکھ کھولی۔مظہر عباس کا کہنا تھا کہ اس ملک میں مارشل لاء لگنا ہی ایک المیہ ہے، عمران خان کہتے ہیں میرا کوئی ماتحت مجھ سے استعفیٰ مانگے گا تو اسے فارغ کردوں گا، 12اکتوبر 1999ء کو ایک منتخب وزیراعظم نے آرمی چیف کو برطرف کیا،اس کے بعد الٹا اسی منتخب وزیراعظم سے استعفیٰ مانگا گیا۔وزیراعظم نے استعفیٰ دینے سے انکار کیا تو اسے گرفتار کرلیا گیا،یہاں سیاستدان آرٹیکل چھ پڑھے بغیر کسی پر بھی یہ مقدمہ بنانے کا کہہ دیتے ہیں،حکومت آج تک بانی متحدہ کیخلاف غداری کا مقدمہ ثابت نہیں کرسکی ہے۔

Sharing is caring!

Comments are closed.