عارف نظامی کا زبردست انکشاف

لاہور (ویب ڈیسک) نامور کالم نگار عارف نظامی اپنے ایک کالم میں لکھتے ہیں ۔۔۔۔۔۔وزیر ریلویز شیخ رشید جو اپنی مخصوص فقرے بازی کے حوالے سے اپنے باس عمران خان کی خوشامدمیں یکتاہیں نے اپنے حالیہ ٹیلی ویژن انٹرویو میں وزیراعظم کو مبارک باد دی کہ انہوں نے پاکستان کو بھی ان 70 غریب ترین ملکوں

کی صف میں شامل کرا لیا ہے جو آئی ایم ایف کے کورونا سے نمٹنے کیلئے ایمرجنسی قرضے کے حقدار ٹھہرے ہیں۔ واضح رہے کہ پاکستان کا شمار ان مڈل انکم ممالک میں ہونے لگا تھا جو غریب ترین ممالک کی صف میں شامل نہیں ہوتے۔ جب ہم یورپ سے اپنی ٹیکسٹائل مصنوعات پربنگلہ دیش کی طرح خصوصی ڈیوٹیوں کی چھوٹ مانگ رہے تھے تو برسلز میں براجمان یورپی یونین کی بیوروکریسی نے ٹکا سا جواب دیا کہ بنگلہ دیش کا شمار تو غریب ترین ممالک میں ہوتا ہے لیکن پاکستان اس فہرست میں نہیں آتا۔ تاہم بعد میں ہمیں یہ سہولت مل گئی تھی۔ گویا کہ شیخ رشید اس بات کو بھی حکومت کی کامیابیوں میں شامل کر رہے ہیں کہ ہم غریب سے غریب تر ہوگئے ہیں۔ اس انٹرویو میں انہوں نے ایک اور دلچسپ دعویٰ کیا کہ شہبازشریف اس لالچ میں پاکستان واپس آئے تھے کہ یہاں پرکورونا وائرس کی بنا پر حکومت جانے والی ہے اور ان کی دوبارہ لاٹری نکل آئے گی۔ شیخ صاحب کے مطابق شریف برادران کا اقتدار کے بغیر گزارا نہیں ہوتا لیکن موصوف کو اپنے گریبان میں بھی جھانکنا چاہئے۔ وہ میاں نواز شریف کے پہلے دور حکومت میں وزیر بنے اورپھر بنتے ہی چلے گئے۔ مسلم لیگ ق میں شمولیت کے بعد وہ جنرل پرویز مشرف کے بھی وزیر اطلاعات رہے۔ آصف زرداری کی پیپلز پارٹی نے انہیں لفٹ نہیں کرائی اور بعد ازاں جب میاں نواز شریف تیسری بار وزیراعظم بنے تو ارکان قومی اسمبلی کی حلف برداری کے موقع پر بطور نگران وزیر اطلاعات میں بھی وہاں موجود تھا۔ شیخ صاحب نے نواز شریف کے پاس جا کر انہیں بڑی پرجوش جپھی ڈالی لیکن میاں نواز شریف کا دل اچاٹ ہو چکا تھا لہٰذا انہوں نے انہیں وزیر نہیں بنایا تھا۔ (ش س م)

Comments are closed.