عربوں کی پسند ناپسند : معلوماتی تحریر

لاہور (ویب ڈیسک) سرکارﷺ اور ان کے رفیق اکثر سفید لباس۔ سرما میں اونی کپڑا۔ فرمایا: سفید ملبوس پہنا کرو، یہ زیادہ پاکیزہ ہے۔ تجربہ یہ کہتاہے کہ سفید لباس خیال میں بالیدگی اور اجلے پن کے احسا س کو جنم دیتاہے۔ رنگین ملبوس ممنوع نہیں۔خود آنجنابﷺ کو سبز رنگ بھایا کرتا۔

نامور کالم نگار ہارون الرشید اپنے ایک کالم میں لکھتے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ یمن کی رنگین چادر کسی نے تحفے میں پیش کی تو پسندیدہ ٹھہری؛اگرچہ کسی کو عنایت کردی۔ ایرانی شلوار پیش کی گئی توبھی پسند فرمائی۔ عرب حالانکہ تہبند ہی کو ترجیح دیتے رہے۔ بغداد میں سریر آرائے سلطنت ہارون الرشید کے پاس چار ہزار رنگین عمامے تھے۔ لمبا کرتا اور پاجامہ پہنتا لیکن عرب ثقافت سے اپنی وابستگی جتلانے کے لیے عربوں کی مخصوص چپل پہنتا، جس سے ملتی جلتی آج بھی عالمِ عرب اور برصغیر میں پہنی جاتی ہے۔عرب ثقافت سے اظہارِ وابستگی کے لیے،ٹانگ پر ٹانگ رکھ کر اس کی نمائش کیا کرتا۔ سرکارﷺکے عہد میں عرب کیا کھایا کرتے؟ جو کی روٹی، ابلا یا آگ پر بھونا گیا گوشت، پیاز اگرچہ رائج تھا مگر ادرک اور لہسن نہیں۔دوسروں کو پیاز کھانے سے روکا نہیں لیکن خود پرہیز فرماتے۔ فرمایا: مجھ سے سرگوشی کی جاتی ہے۔ یعنی فرشتہ وحی کے ساتھ میرے پاس آتا ہے۔ نفاستِ طبع کا عالم یہ تھا کہ ہاتھ سے کبھی خارش نہ کی۔ اس کے لیے صحرا کی دھوپ کا پاکیزہ تنکا استعمال کرتے۔ گندم کی روٹی بھی عرب کھالیا کرتے مگر معمولاً نہیں۔ کوئی اس کا عادی ہوتا تو اسے عیاش کہتے۔ ان کا خیال تھا کہ صحت کے لیے یہ ناموزوں ہے۔ ’’عیش‘‘ عربی زمان میں گندم کی روٹی کو کہتے ہیں۔ سبزیاں بھی کھائی جاتیں۔ قریب کی بستی میں رہنے والے ایک صحابی آپﷺ کے لیے سبزی لایا کرتے۔ کم رو تھے، تشریف لاتے تو آپﷺ ارشاد کرتے: میرا بھائی آیا ہے۔ اس شخص کے سوا آپﷺ نے کبھی کسی دوسرے کو بھائی نہ کہا۔

ایک بار کسی نے پوچھا: یارسول اللہﷺکیا ہم آپ کے بھائی نہیں۔ فرمایا: نہیں، تم میرے رفیق ہو۔ میرے بھائی تومیرے بعد آئیں گے۔ وہ اونٹنی اور بکری کا دودھ پیتے۔ مسجدِ نبوی کے دروازے پر ایک خاتون سبزیوں کا گاڑھا شوربا بیچا کرتی۔’’طبِ نبوی‘‘ کے مصنف نے اسے سبزیوں کی نہاری قرار دیا ہے۔ مرچ، ادرک اور لہسن طعام کا حصہ نہیں تھے، گرم مصالحے بھی نہیں۔پیدل چلتے یا گھڑ سواری کرتے۔ بیٹھ رہنے والوں کو کاہل گردانا جاتا۔ ان کے ایک گروہ کو سرکارﷺ نے مشورہ دیا تھا کہ کچھ دیر وہ تیز تیز چلا کریں۔ ستّو شوق سے پیے جاتے اور مشروب نہیں، کھانے کا حصہ تھے۔ عمر فاروقِ اعظم ؓ جوکی روٹی پر زیتون کا تیل لگاتے اور ستّو کا ایک گلاس پی لیتے۔ مٹھاس کے لیے شہد تھا، آنجنابﷺ خال ہی اس کے استعمال میں ناغہ کرتے اور پانی میں پیا کرتے۔ گڑ بھی جو دساور سے درآمد کیا جاتا۔ دیسی مرغی پسند کی جاتی، جسے ’’دجاجِ سندھی‘‘ کہا جاتا۔ پاکستان میں موجود کشمیری زعما کو ایک بار زحمت دی۔ کشمیری کھانا دیکھتے ہی صلاح الدین کھل اٹھے۔ کچھ دن بعد کہا: یہ دنیا کا لذیذ ترین طعام ہے مگر صحت کے لیے نقصان دہ۔ حکایت لذیذ تھی؛چنانچہ دراز تر ہو گئی۔ اصلاً یہ ایک مقالے کا موزوں ہے۔ آج کا آدمی کیا کھاتا ہے؟ الا بلا، چٹورے پن کا مارا ہوا۔ چینی سے لبریز مشروبات، کیمیکل والا بناسپتی گھی، ملاوٹی دودھ، چینی سے بنا شہد،کیمیکل کے چھڑکاؤ والی سبزیاں، پانی ٹھنسا گوشت۔ ٹیسٹ کا نتیجہ منفی آیایعنی کرونا محض اندیشہ تھا۔ اللہ کا شکر ادا کیا مگر ادراک ہوا کہ آدمی اتنا ہی شادکام اور صحت مند رہ سکتاہے، جتنا کہ فطرت کے قریب ترہو۔ سائنس کی عطا کر دہ سہولتوں نے راحت بہم پہنچائی لیکن اکثر کی صحت برباد کر دی۔ زندگی تگ و تاز ہے، تفریح نہیں۔

Comments are closed.