عوامی سروے کے حیران کن نتائج

لاہور (ویب ڈیسک)ملک کی تین بڑی ریسرچ کمپنیز این اے 75ڈسکہ میں دوبارہ ضمنی انتخاب کی صورت میں مسلم لیگ ن کی فتح کی پیش گوئی کررہی ہیں جبکہ تحریک انصاف کی جانب سے ن لیگ کو حلقے کےکئی علاقوں میں ٹف ٹائم دینے کا بتایا جارہا ہے ۔گیلپ پاکستان ، آئی پی ایس او ایس ، اور

پلس کنسلٹنٹ کے قومی اسمبلی کے حلقے این اے 75 میں شماریاتی طور پر منتخب ایک ہزار سے زائد رجسٹرڈ ووٹرز سے کروائے گئے سروے میں مسلم لیگ ن تمام جماعتوں کے مقابلے میں ووٹرز کی پسندیدگی میں سب سے آگے نظر آئی ۔گیلپ پاکستان کےسروے میں 36 فیصد ووٹرز نے دوبارہ ضمنی انتخاب میں مسلم لیگ ن کوووٹ دینے کےلیے اپنی پہلی پسند کہا۔32فیصدنے تحریک انصاف کوو وٹ دینے کا ارادہ ظاہر کیا جبکہ 4 فیصد نے تحریک لبیک پاکستان کو ووٹ ڈالنے کےلیے منتخب کیا ۔18فیصد نے کس جماعت کوووٹ دینا ہے اس بارے میں فی الحال فیصلہ نہ کرنے کا کہا جبکہ 3 فیصد نے ووٹ نہ دینے کا ارادہ ظاہر کیا۔آئی پی ایس او ایس کے سروے میں 45 فیصد ووٹرز پاکستان مسلم لیگ ن کے حق میں ووٹ ڈالنے کا ارادہ ظاہر کرتے نظر آئے ۔27 فیصد نے تحریک انصاف کو ووٹ دینے کا کہا جبکہ 5 فیصد نے تحریک لبیک پاکستان کوووٹ دینےکےلیے اپنی پسند کہا ۔ سروے میں 18 فیصد نے فی الحال کس کو ووٹ دینا ہے اس بارے میں فیصلہ نہ کرنے کا کہا۔جبکہ 4 فیصد نے ووٹ نہ دینے کا ارادہ ظاہر کیا ۔پلس کنسلٹنٹ کے سروے میں ڈسکہ سے 52 فیصد ووٹرز نے ن لیگ کو ضمنی انتخاب میں دوبارہ ووٹ دینے کےلیے پسند کیا۔ 40 فیصد نے تحریک انصاف کوووٹ دینے کا ارادہ ظاہر کیا ۔ جبکہ 2 فیصد نے تحریک لبیک پاکستان اور 1 فیصد نے پاکستان پیپلزپارٹی کو ووٹ دینے کے حق میں بات کی ۔پلس کنسلٹنٹ کے سروے میں 4 فیصد نے فی الحال کس جماعت کو ووٹ دینا ہے اس بارے میں فیصلہ نہ کرنے کا کہا ۔ جبکہ 1 فیصد نے ضمنی انتخاب میں ووٹ نہ دینے کا ارادہ ہونے کاکہا۔تینوں سرویز میں مسلم لیگ ن اور پی ٹی آئی کو ووٹ دینے کا کہنے والوں کے درمیان فرق دیکھا جائے تو گیلپ پاکستان کے سروے میں میں ن لیگ اور پی ٹی آئی کے درمیان صرف 4 فیصد کا فرق نظر آیا ۔ لیکن آئی پی ایس او ایس میں 18 فیصد جبکہ پلس کنسلٹنٹ میں یہ فرق 12 فیصد کا ہے ۔گیلپ پاکستان اور آئی پی ایس او ایس کے سرویز میں یہ نوٹ کیا گیا کہ گزشتہ دو انتخابات میں مسلم لیگ ن کے ووٹ بینک میں کمی آئی اور تحریک انصاف کے ووٹ بینک میں اضافہ ہوا ہے ۔گیلپ پاکستان کے سروے میں 2018 میں 49 فیصد نے ن لیگ، 34 فیصد نے تحریک انصاف تو 4 فیصد نے تحریک لبیک پاکستان کو ووٹ دینے کاکہا ۔ جبکہ 19فروری کے ضمنی انتخاب میں 42 فیصد نے پاکستان مسلم لیگ ن تو 42 فیصد نے ہی پاکستان تحریک انصاف کو ووٹ دینے کا کہا۔اس کے علاوہ 7 فیصد نے ضمنی انتخاب میں تحریک لبیک پاکستان کو ووٹ دینے کا بتایا۔

Sharing is caring!

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *