لاہور اور گوجرانوالہ کے کن علاقوں کو مکمل سیل کر دیا گیا ، وہاں صورتحال کیا ہے ؟ جانیے

لاہور (ویب ڈیسک) لاہور میں کورونا سے زیادہ متاثرہ 66 علاقوں کو سیل کر دیا گیا۔ محکمہ داخلہ پنجاب نے متاثرہ علاقوں میں 30 جون تک دفعہ 144 بھی نافذ کردی ہے۔لاہور میں سیل کیے گئے علاقوں میں پولیس نے رات 12 بجتے ہی لاک ڈاؤن کردیا۔ متاثرہ علاقوں میں بیرئیرز لگا کر راستے بند کردیے گئے۔

محکمہ داخلہ پنجاب کی جانب سے لاہور میں کورونا سے زیادہ متاثرہ علاقوں کو30 جون تک سیل کرنے کا نوٹیفکیشن بھی جاری کر دیا گیا ہے، جس کے مطابق سیل کیے گئے علاقوں میں دفعہ 144 نافذ کردی گئی ہے۔سیل کئے گئے علاقوں میں شاپنگ مالز، مارکیٹس، پبلک پرائیوٹ دفاتر بند رہیں گے۔ عوام کی آمد و رفت سمیت پبلک ٹرانسپورٹ چلانے کی اجازت نہیں ہوگی۔ایک شخص ذاتی سواری ضرورت کے تحت استعمال کرسکے گا۔ سیل کیے گئے علاقوں میں سماجی اور مذہبی اجتماعات پر پابندی ہوگی۔جن علاقوں کو سیل کیا گیا ہے ان میں پھل، سبزی، دودھ، کریانہ، پیٹرول اور تندور صبح 9 سے شام 7 بجے تک کھلے رہیں گے۔ میڈیکل اسٹورز، لیبارٹری پورا ہفتہ 24 گھنٹے کھلے رہیں گے۔ ان علاقوں میں مقیم جج، وکیل، ڈاکٹرز، ہیلتھ ورکرز، پولیس اہلکار پابندی سےمستثنیٰ ہونگے۔ مریض کے ساتھ 2 افراد کو اسپتال جانے کی اجازت ہوگی۔دوسری جانب ایک اور خبر کے مطابق نجاب کے شہر گوجرانوالہ میں کورونا وائرس کا پھیلاؤ روکنے کے لیے انتظامیہ نے 6 علاقوں میں اسمارٹ لاک ڈاؤن نافذ کر دیا ہے۔گوجرانوالہ کے ڈپٹی کمشنر کے مطابق گوجرانوالہ کے علاقے سیٹلائٹ ٹاؤن کے بی اور ای بلاک، پیپلز کالونی کے ڈبلیو اور وائے بلاک میں اسمارٹ لاک ڈاؤن نافذ کیا گیا ہے۔انہوں نے بتایا کہ کورونا وائرس کا پھیلاؤ روکنے کے لیے واپڈا ٹاؤن میں مکمل جبکہ ماڈل ٹاؤن کے بلاک اے اور بی میں اسمارٹ لاک ڈاؤن نافذ کر دیا گیا ہے۔ڈپٹی کمشنر گوجرانوالہ کا مزید کہنا ہے کہ گوجرانوالہ کے علاقوں احمد نگر اور قلعہ دیدار سنگھ کی مختلف گلیاں بھی سیل کر دی گئی ہیں۔انہوں نے یہ بھی بتایا کہ لاک ڈاؤن اور اسمارٹ لاک ڈاؤن والے تمام علاقوں کو بیریئرز لگا کر بند کر دیا گیا ہے، لوگوں کی آمد و رفت روک دی گئی ہے اور پولیس کی نفری تعینات کر دی گئی ہے۔

Sharing is caring!

Comments are closed.