مشہور عالمی ادارے کی رپورٹ جاری

لاہور (ویب ڈیسک) کرونا وائرس سے نمٹنے کیلے لئے متاثرہ ممالک مختلف پالیسیز کا استعمال کر رہے ہیں۔ ایسے میںایک عالمی ادارے نے کورونا وائرس سے پیدا ہونے والے سماجی چیلنجز سے نمٹنے کے لیے پاکستان کی اختیار کی گئی پالیسیز کو سراہتے ہوئے انہیں ایشیا میں بہترین قرار دیا ہے۔لہذاملک بھر میں کورونا وائرس کے

فعال کیسز میں کمی واقع ہوئی ہے جس کے بعدتعداد 9000 سے گھٹ کر 8 ہزار 588 رہ گئی۔نیشنل کمانڈ اینڈ آپریشن سینٹرکے تازہ اعداد وشمارکے مطابق گزشتہ 24 گھنٹوں میں کورونا کے467 نئے کیسز رپورٹ ہوئے جس کے بعد ملک بھرمیں مجموعی کیسز کی تعداد 3 لاکھ 15 ہزار 727 ہوگئی۔این سی او سی کے مطابق فعال کیسز کی تعداد 8 ہزار 588 رہ گئی جب کہ اب تک کورونا وائرس میں مبتلا 3 لاکھ 616 مریض صحت یاب ہوچکے ہیں۔ گزشتہ 24 گھنٹوں میں مزید 6 اموات رپورٹ ہوئیں جس کے بعد مجموعی اموات کی تعداد 6 ہزار 523 ہوگئی۔ سندھ میں مریضوں کی تعداد ایک لاکھ 38 ہزار 593 ، پنجاب میں ایک لاکھ 033، خیبرپختونخوا 38 ہزار 105 ، اسلام آباد میں 16 ہزار 845، بلوچستان میں 15 ہزار 420 ، آزاد کشمیر 2 ہزار 874 اورگلگت بلتستان میں 3 ہزار 857 تعداد ہوگئی۔وزارت سماجی تحفظ و تخفیف غربت کے مطابق انٹر نیشنل پالیسی سنٹر فار انکلوسیو گروتھ (IPC-IG)کی جانب سے منعقدہ گلوبل کانفرنس میں پاکستان کے کرونا سوشل پروٹیکشن ریلیف رسپانس کو ایشیاء کے تمام ممالک میں بہترین قرار دیا گیا۔ یونیسف، اقوام متحدہ اور انٹر نیشل پالیسی سنٹر کی جانب سے ایشائی ممالک کے کوڈ۔19 رسپانس کے حوالے سے کی جانے والی ایک تحقیق میں وسیع میپنگ کے ذریعے ایشاء اور پیسفک ریجن کے ممالک کے کرونا وباء کے دوران کیے جانے والے اقدامات کا جائزہ پیش کیا گیا۔ مذکورہ تحقیق میں بتایا گیا ہے کہ پاکستان نے احساس ایمرجنسی کیش کے ذریعے ایشاء میں سب سے زیادہ وسیع پیمانے پر سماجی تحفظ کا پروگرام کیا۔ حساس ایمرجنسی کیش پروگرام کے دائرہ کار اور حکمت عملی پر بات کرتے ہوئے ڈاکٹر نشتر نے کہا کہ لاک ڈاؤن کے نفاذ کے دس دن کے اندر حکومت پاکستان نے ڈیڑ کروڑ خاندانوں کو فوری ریلیف پہنچانے کے لیے کیش امداد ریلیف پروگرام کا آغاز کیا۔ان کا کہان تھا کہ 1.25 ارب ڈالر لاگت کے اس پروگرام پر نہایت تیز رفتاری سے عمل در آ مد کیا گیااور 75 ڈالرز کی امدادی رقم غریب و مستحق خاندانوں کو بہم پہنچائی گئی۔ڈاکٹر نشتر نے مزید کہا کہ مجموعی طور پر احساس ایمرجنسی کیش پروگرام نے مستحق و ضرورت مند خاندانوں کو فوری ریلیف ہی نہیں پہنچایا بلکہ پاکستان کے فنانشل سیکٹر کی بنیادوں کو بھی مستحکم کیا۔

Sharing is caring!

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *