ملکہ ترنم نور جہاں نے اداکارہ ہیما مالینی کو پہلی بار دیکھا تو انکے کان میں کیا کہا؟

لاہور (ویب ڈیسک) نورجہاں اور اعجاز درانی کی بیٹیوں کی حیثیت سے خوبصورتی قدرت نے ورثے میں ودیعت کی ہے۔ سنہ 80 کی دہائی میں جب ملکہ ترنم نورجہاں انڈیا کے دورے پر گئیں تو اُن کی بیٹی حنا ان کے ہمراہ تھیں۔ایک طرف تو پورے بالی وڈ کی آنکھیں حنا کی خوبصورتی

کو دیکھ کر خیرہ کن تھیں دوسری طرف انڈین فلم انڈسٹری کے دو معروف پروڈکشن ہاوسز، جس میں یش چوپڑا اور شومین راج کپور شامل تھے، دونو ں حنا کو اپنی فلموں کا کردار بنا کر اس کی خوبصورتی کو سیلولائیڈ پر محفوظ کرنے کے شدید خواہشمند تھے۔لیکن نورجہاں اور حنا دونوں نے یہ کہہ کر انکار کر دیا کہ ان پر پہلا حق پاکستان کا ہے۔ ٹینا نے بتایا کہ ’ماں اپنے بچوں کی عاشق تھیں، میرے لیے کہا کرتیں کہ میں انھیں دنیا کی ہر شے سے عزیز ہوں۔ اسی طرح ماں میری بہن حنا کی آنکھوں کی عاشق تھیں اور کہا کرتیں کہ رب نے حنا کی آنکھیں اپنے ہاتھوں سے بنائی ہیں۔‘ٹینا نے بتایا کہ نورجہاں انڈین اداکارہ ہیمامالنی کی پرستار تھیں۔’اپنے انڈیا کے دورے پر میری والدہ (نورجہاں )نے دھرمیندر سے کہا کہ میں آپ کی بیوی سے ملنا چاہتی ہوں تو وہ اپنی پہلی بیوی کو ان سے ملوانے لے آئے۔ میری والدہ نے کہا کہ دھرم جی آپ کی پہلی بیوی بھی بڑی حسین ہیں لیکن میں تو ہیما مالنی کی پرستار ہوں۔ دھرمیندر نے جب یہ سنا تو انھوں نے اگلے روز نور جہاں اور ہیمامالنی کی ملاقات طے کروا دی۔‘حنا بتاتی ہیں کہ ’میں تو اپنی والدہ کے ساتھ انڈیا کے دورے پر تھی۔ مجھے یاد ہے ہم ہوٹل سے اٹھ کر ہیمامالنی کے گھر گئے تو ہیما مالنی نے جب دروازہ کھولا تو ماں انھیں دیکھ کر رونے لگیں اور اسی طرح ہیما مالنی بھی نورجہاں کو دیکھ کر جذباتی ہو گئیں۔

ماں نے ہیما مالنی سے کہا آپ بہت اچھی اداکارہ ہیں لیکن مجھے اس لیے بھی پسند ہیں کہ آپ کی شکل میری بیٹی حنا سے ملتی ہے۔ حنا بتاتی ہیں کہ اس پر ہیمامالنی نے مجھے بہت پیار کیا۔‘مینا نے بتایا کہ ان کی والدہ حسن پرست تھیں۔ ’جب وہ اپنی زندگی کے آخری سالوں میں بیماری کاٹ رہی تھی اور آئی سی یو میں داخل تھیں تو میری ایک سہیلی ماں کی خیریت دریافت کرنے آگئیں، ماں نے اپنے منہ سے آکسیجن ماسک اتار کر میری سہیلی کو اپنے پاس بلایا اور اس کی خوبصورتی کی تعریف کی۔‘جب نور جہاں کی تینوں بیٹوں سے یہ سوال کیا تو اس پر حنا نے کہا کہ ان کی والدہ قدرتی طور پر خوبصورت تھیں۔ ’وہ ایک خوبصورت خاندان میں پیدا ہوئی تھیں۔ ان کی بڑی بہن آپی عیدن جو نورجہاں کی بڑی بہن تھیں وہ بڑی حسین خاتون تھیں۔‘’ماں بتاتی تھیں کہ ایک طویل عرصہ تک تو وہ اپنے آپ کو میک اپ آرٹسٹوں کے سہارے چھوڑ دیا کرتی تھیں، وہ جیسے چاہیں منھ کو بنا بگاڑ دیا کرتے تھے۔ پھر امریکہ میں نور جہاں کی ملاقات الزبتھ جیسی عظیم میک اپ آرٹسٹ سے ہوئی جس نے انھیں یہ فن سکھایا۔ اس کے بعد نورجہاں نے اپنے چہرے کو کبھی کسی میک اپ آرٹسٹ کو ہاتھ نہیں لگانے دیا تھا۔ الزبتھ سے پہلے انھوں نے برصغیر کی نامور فنکارہ مختار بیگم سے ان کا انداز مستعار کیا جو فریدہ خانم کی بڑی بہن تھیں۔‘(بشکریہ : طاہر سرور میر ، بی بی سی )

Comments are closed.