مولانا فضل الرحمٰن نے پیپلز پارٹی کو مشورہ دے دیا

اسلام آباد(ویب ڈیسک)پاکستان ڈیموکریٹک موومنٹ (پی ڈی ایم)مولانا فضل الرحمان نے پیپلزپارٹی اوراے این پی سے فیصلے پر نظرثانی کا مطالبہ کردیا۔اسلام آباد میںمیڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے مولانا فضل الرحمان نے کہاکہ پی ڈی ایم 10جماعتوں کے اتحاد کا نام ہے،اتحاد کا عمل باضابطہ تنظیمی ڈھانچہ بھی ہے،اکثر فیصلے ہمارے اتفاق رائے قوم

کے سامنے آئے ہیں ، چیئرمین ،ڈپٹی چیئرمین سینیٹ کیلئے امیدواروں کا تعین اتفاق رائے سے ہوا تھا،قائد حزب اختلاف کیلئے بھی امیدوار کا تعین اتفاق رائے سے ہوا تھا۔سربراہ پی ڈی ایم نے کہاکہ جس جماعت سے شکایت تھی اس سے وضاحت طلب کی،جووضاحت طلب تھی اس میں دو لائنوں کی عبارت بھی میڈیا کے سامنے نہیں رکھی ،مکمل احترام کیساتھ انکے وقار،عزت نفس کوسامنے رکھتے ہوئے وضاحت طلب کی تھی ،انہوں نے کہاکہ دونوں جماعتوں کے سیاسی قدکاٹھ کا تقاضا تھا کہ وضاحت کاجواب دیتے ، ضروری طورپر عزت نفس کا مسئلہ بناناسیاسی تقاضوں کے مطابق نہیں تھا،وہ پی ڈی ایم کا سربراہی اجلاس بلانے کا مطالبہ کرسکتے تھے ۔مولانا فضل الرحمان نے کہاکہ وضاحت طلبی کے نوٹس کو انہوں نے پھاڑ دیا، پی ڈی ایم ایک بہت ہی سنجیدہ فورم اور اتحاد ہے،ہم نے مشکل مراحل عبورکئے ہیں ، آج بھی ہم اس فورم کے عظیم مقصد کو مدنظر رکھتے ہیں ،اب بھی ان کیلئے موقع ہے اپنے فیصلوں پر نظرثانی کریں ،آپس میں بیٹھ کر شکایتوں کودور کرسکتے ہیں ، پی ڈی ایم کا پروگرام عوام کی امانت ہے۔انہوں نے کہاکہ اپنے سیاسی فائدے اور نقصانات کو مدنظررکھ کر فیصلے نہیں کریں گے ،پیپلزپارٹی اور اے این پی کے عہدیداروں نے استعفے ہمیں بھیج دیئے ہیں ، آپ اپنے فیصلوں پر نظرثانی کریں، آپ کے مطالبات سننے کیلئے تیار ہیں ۔مولانا فضل الرحمان نے کہاکہ قوم مہنگائی میں پس رہی ہے پاکستان قرضوں میں دھنستا جا رہاہے،پاکستان کی معیشت ڈوبتی جارہی ہے،ان کاکہناتھا کہ سیاست میں وقار پیدا کریں جس کیلئے ہم منتظر رہیں گے ،35 سال اور70 سال کی عمر میں فرق ہونا چاہئے ۔سربراہ پی ڈی ایم نے کہاکہ انھوں نے خود کو علیحدہ کیاہے ہم انہیں موقع دے رہے ہیں ،ہمیں توقع نہیں تھی کہ وہ باپ کو باپ بنائیں گے ،انہوں نے کہاکہ جو میرے ساتھ کھڑے ہیں ان سے کہتا ہوں بیان بازی میں نہیں پڑنا،پارٹی اپنی جگہ کھڑی ہوتی ہے، افراد آتے جاتے رہتے ہیں ،پی ڈی ایم برقرارہے اور رہے گی آخری دم تکعوام کےساتھ ہیں ،ہم آخری دم تک عوام کے ساتھ کھڑے رہیں گے ۔

Sharing is caring!

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *