مولانا فضل الرحمٰن کو اپنی ہی جماعت نے سرپرائز دے دیا

لاہور (ویب ڈیسک) حکومت کے خلاف عدم اعتماد لانے کی تحریک کے حوالے سے مسلم لیگ ن اور پیپلزپا رٹی کی طرف سے مایوسی کے بعد مولانا فضل الرحمان کی اپنی جماعت کے اندر بھی تقسیم پیدا ہوگئی ہے ،رہنمائوں نے اپوزیشن جماعتوں سے گلے اور شکووں کااظہار کردیا۔ مصدقہ ذرائع نے اس بات کی تصدیق کی

کہ حکومت کے خلاف عدم اعتماد کی تحریک آ ئندہ چار ماہ تک آنے کا دور دور تک امکان نہیں ، مولانا فضل الرحمان اپنے آ پ کو سیاسی طور پر زندہ رکھنے اور اپوزیشن جماعتو ں کے کچھ اہم رہنمائوں کیخلاف نیب کارروائیوں کے حوالے سے پریشر ڈالنے کیلئے ایک اہم اپوزیشن رہنما جو پاکستان سے باہر ہیں ان کی ہدایت اور مشاورت سے یہ سیاسی کھیل کھیل رہے ہیں۔ ذرائع کے مطابق مولانا فضل الرحمان کی جماعت جے یو آئی کے اہم رہنمائوں نے مولانا فضل الرحمان کو واضح طور پر کہا کہ جو دھرنے میں ہمارے ساتھ پیپلزپا رٹی اور ن لیگ نے کیا تھا اب اس سے بھی برا ہمارے ساتھ کیا جائے گا جس سے ہماری سیاسی پوزیشن بھی خراب ہو گی اور ہم بہت پیچھے چلے جائیں گے ۔ذرائع کا کہنا ہے کہ مولانا فضل الرحمان وفاقی حکومت کے خلاف تحریک عدم اعتماد لانے کے حوالے سے شور ضرور ڈالیں گے مگر انہیں کوئی سپورٹ ملے گی ۔تمام رہنمائوں کی کوشش کے باوجود بجٹ با آ سانی نہ صرف پاس ہو جائے گا بلکہ مولانا فضل الرحمان اور کچھ ناراض اتحادی بلوچستان کے محاذ پر بھی کامیاب نہیں ہو سکیں گے ۔ اس حوالے سے مسلم لیگ ن کے رہنما راجہ ظفر الحق نے کہا کہ ابھی حالات ایسے نہیں کہ حکومت کے خلاف تحریک عدم اعتماد کو لایا جا سکے کبھی کچا کھیل نہیں کھیلنا چاہئے ان حالات میں حکومت کے خلاف عدم اعتماد لانا ٹھیک بات نہیں ہو گی۔ان حالات میں بظاہر مولانا کی خواہشات پر پانی پھر گیا ہے ۔

Sharing is caring!

Comments are closed.