(م) لیگ اور (ش) لیگ کی خبروں کی حقیقت کیا ہے ؟

لاہور (ویب ڈیسک) عام خیال یہ ہے اور کئی وفاقی وزراء اور خصوصاً شیخ رشید بھی بار بار یہ بات کہتے رہتے ہیں کہ نواز شریف اور شہباز شریف کے سیاسی خیالات میں مطابقت نہیں ہے، شہباز شریف اپنے بڑے بھائی کے برعکس مفاہمت کی سیاست چاہتے ہیں۔ یہ بھی کہا جاتا ہے کہ

نامور کالم نگار خلیل احمد نینی تال والا اپنے ایک کالم میں لکھتے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔مسلم لیگ(ن) دوحصوں میں بٹ جائے گی، ایک حصہ نواز شریف کی سیاست کرے گا اور شہباز شریف کی قیادت میں نئی مسلم لیگ بن جائے گی۔لیکن اگر واقعی ایسا ہے تو پھر سوال یہ ہے کہ کیا شہباز شریف کی گرفتاری کے بعد مفاہمت کا جذبہ باقی رہے گا یا نہیں؟ مسلم لیگ (ن) کی نائب صدر مریم نواز نے تو کہہ دیا ہے کہ شہباز شریف کو اِس لئے گرفتار کیا گیا ہے کہ انہوں نے اپنے بڑے بھائی کا ساتھ چھوڑنے سے انکار کر دیا ہے۔اس کے باوجود ’’نون‘‘ اور ’’شین‘‘کی گردان جاری ہے۔نیب میں سیاسی رہنماؤں کے خلاف جو مقدمات چل رہے ہیں، اُن میں ابھی تک 2کے فیصلے ہوئے ایک فیصلہ کرنے والے جج بھی یہ تسلیم کر چکے کہ اْن پر فیصلے کے لئے دباؤ تھا۔ ان کی وڈیو بھی بہت کچھ کہہ رہی ہے، وہ اب برطرف بھی ہو چکے،لیکن فیصلہ برقرار ہے جو کئی سوالات اٹھا رہا ہے، ایسے فیصلے اگر عدالتوں ہی میں زیر بحث ہوتے تو بھی ایک بات تھی،لیکن جس طرح ملزموں کا میڈیا ٹرائل ہو رہا ہے وہ اپنی جگہ محل ِ نظر ہے۔ وزراء کی ٹیمیں میڈیا پر عدالتی فیصلوں پر من پسند تبصرے کرتی ہیں، کوئی دوسرا ان پر اظہارِ خیال کرے تو اْنہیں پسند نہیں آتا اور فوراً ’’توہین، توہین‘‘ کا راگ الاپنے لگتے ہیں، اس طرزِ عمل نے یہ فضا پیدا کر دی ہے کہ حکومت اپوزیشن کو چوروں اور لٹیروں کا ٹولہ کہہ رہی ہے

اور اپوزیشن جماعتیں حکومت کو سلیکٹڈ اور دھاندلی کی پیداوار قرار دے رہی ہیں۔ نتیجہ یہ ہے کہ سیاسی تقسیم کی خلیج بہت بڑھ گئی ہے اور آنے والے دِنوں میں اس میں کمی آتی محسوس نہیں ہوتی۔اپوزیشن جماعتیں حکومت پرالزام لگاتی ہیں کہ احتساب کے نام پر انتقام لیا جا رہا ہے،اپوزیشن رہنماؤں کے خلاف تو مقدمات بنائے جا رہے ہیں، لیکن جن معاملات کا تعلق حکومت سے ہے، اُن پر کوئی توجہ نہیں دی جا رہی۔ یہ بات لائق توجہ ہے کہ احتساب کے ادارے کا سارا زور اپوزیشن رہنماؤں کی گرفتاریوں پر ہی کیوں ہے، جومقدمات بنے ہیں وہ صرف اپوزیشن رہنماؤں کے خلاف ہی کیوں بن رہے ہیں۔ حکومت کے جو اسکینڈل سامنے آ رہے ہیں اُن میں کسی کی گرفتاری کیوں نہیں ہو رہی؟۔ ایک وفاقی وزیر اور اُن کے بھائی کے خلاف تحقیقات شروع کی گئی تھیں وہ روک لی گئیں۔ مالم جبہ، بلین ٹری سونامی اور بی آر ٹی پشاور کے معاملات پُراسرار طور پر دبا دیے گئے، یہاں تک کہ حکمران جماعت کے خلاف فارن فنڈنگ کی جو تحقیقات ہو رہی ہیں، اُن میں بھی تاخیر کی جا رہی ہے یہ الزام ایک ایسے شخص نے لگایا ہے جو پارٹی کا بنیادی رکن اور بہی خواہ ہے۔ یہ تمام امور اِس امر کی شہادت دیتے ہیں کہ احتساب یک طرفہ اور سلیکٹڈ ہے۔ اگر یہ احتساب بلاتفریق ہو رہا ہوتا تو حکومتی پارٹی کے جو لوگ گرفتار ہوئے تھے چند ہفتوں کے بعد انہیں کلین چٹ تو نہ مل جاتی، اِس لئے اپوزیشن اگر شہباز شریف کی گرفتاری کو اے پی سی کا نتیجہ قرار دیتی ہے تو اس میں کچھ نہ کچھ صداقت تو ہو گی۔دوسری جانب پیمرا نے مسلم لیگ (ن )کے قائد اور سابق وزیراعظم نواز شریف کی تقریر نشر کرنے پر پابندی عائد کر دی ہے، اس سے قبل پچھلے سال کرنل (ر) انعام الرحمٰن نے پیمرا سے کہا تھا کہ مشرف اور طاہر القادری مفرور ہیں ان کےانٹرویو بند کرائے جائیںتو پیمرا نے جواب میں کہا تھا کہ آئین کے آرٹیکل 19کے تحت ہر شہری کو آزادیٔ اظہار حاصل ہے لیکن نواز شریف کے معاملے پر پیمرا کو آرٹیکل 19بھول گیا۔ پاکستان میں میڈ یا آزاد نہیں یہ بیانیہ آج اپنی موت آپ مر گیا۔

Sharing is caring!

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *