نامور اداکار معین اختر کی زندگی کے آخری دنوں میں انکے اندر کیا انقلاب آیا ؟

لاہور (ویب ڈیسک) بی بی سی کی ایک رپورٹ کے مطابق ۔۔۔۔۔معین اختر کی زندگی کی آخری دہائی میں تبدیلی رونما ہوئی اور وہ اسلام کی تبلیغ سے وابستہ ہو گئے تاہم انھوں نے اپنا تعلق شوبز سے نہیں توڑا۔ان کے والد محمد ابراہیم محبوب 92 برس کی عمر میں فوت ہوئے

اور معین اختر صرف 60 سال زندہ رہے۔ جینیاتی طور پر طویل عمری شاید معین اختر کو بھی نصیب ہوتی لیکن انھوں نے زندگی کا تصرف یوں کیا کہ صرف ایک جنم میں کئی جنم جیئے۔انھیں دو مرتبہ ہارٹ اٹیک ہوا، اوپن ہارٹ سرجری کے بعد بھی انھوں نے اپنے مصروف معمولات زندگی نہ بدلے اور اس جہانِ فانی سے کوچ کر گئے۔ان کے بیٹے منصور معین بتاتے ہیں کہ مادام تساڈ میوزیم کی طرف سے ہم سے اجازت طلب کی گئی کہ معین اختر کی فنی عظمت کے اعتراف میں وہ ان کا مجسمہ آویزاں کرنا چاہتے ہیں لیکن ہم نے انکار کر دیا کیونکہ اسلام میں مجسمہ یا بت بنانا منع ہے۔مادام تساڈ میوزیم میں معین اختر کا مجسمہ تو سجایا نہیں جا سکا لیکن چاہنے والوں کے دلوں میں ان کی تصویر کبھی دھندلی نہیں ہو گی۔

Comments are closed.