نوٹ چل گئے : دنگ کر ڈالنے والی خبر

لاہور (ویب ڈیسک) مینارِ پاکستان کے گریٹر اقبال پارک میں رواں برس 14 اگست کے دن بدتمیزی کا شکار ہونے والی ٹک ٹاکر عائشہ اکرام نے کیس کی سماعت کے دوران لاہور کی سیشن عدالت میں بیان ریکارڈ کرایا ہے جس میں کہا ہے کہ ملزم افتخار کے بے گناہ ہونے کا یقین ہے۔

عائشہ اکرم نے ملزم افتخار کی ضمانت کے لیے ایڈیشنل سیشن جج لاہور کے روبرو بیان ریکارڈ کرایا ہے۔عائشہ اکرم نے عدالت میں ریکارڈ کرائے گئے بیان میں کہا ہے کہ افتخار احمد کے خلاف شک اور غلط فہمی کی بنیاد پر مقدمہ درج کرایا۔ٹک ٹاکر خاتون کا اپنے بیان میں کہنا ہے کہ مطمئن ہوں کہ ملزم افتخار احمد واقعے میں ملوث نہیں، عدالت ملزم افتخار کو ضمانت پر رہا کرے تو مجھے اعتراض نہیں۔ایڈیشنل سیشن جج نے ٹک ٹاکر عائشہ اکرم کے اس بیان کے بعد 1 لاکھ روپے کے مچلکوں کے عوض افتخار احمد کی ضمانت منظور کر لی۔اس سے قبل افتخار احمد کو عائشہ اکرم نے شناخت پریڈ کے بعد باضابطہ شناخت کیا تھا۔واضح رہے کہ مینارِ پاکستان لاہور کے گریٹر اقبال پارک میں رواں سال یومِ آزادی کے موقع پر خاتون ٹک ٹاکر عائشہ اکرم سے بدتمیزی کا واقعہ پیش آیا تھا جو 3 روز بعد سوشل میڈیا کے ذریعے سامنے آیا۔سیکڑوں نوجوانوں نے ٹک ٹاکر عائشہ اکرم اور اس کے ساتھیوں کو گندی حرکات کا نشانہ بنایا تھا، یہ نوجوان ٹک ٹاکر کے کپڑے پھاڑ کر اسے ہوا میں اچھالتے رہے اور انہوں نے اس سے نقدی اور زیورات بھی چھین لیئے۔پولیس واقعے سے بے خبر رہی،جس نے بعد میں خاتون کی درخواست پر 400 نامعلوم ملزمان کے خلاف مقدمہ درج کیا تھا، جبکہ متعدد افراد کو اس کیس میں گرفتار بھی کیا گیا تھا۔