(ن) لیگی خاتون حنا پرویز بٹ نے نیا شوشا چھوڑ دیا

لاہور (ویب ڈیسک) کیا تماشہ لگا یا ہوا ہے؟ زرعی ملک کے عوام پر ہوشربا مہنگائی کے ہتھوڑے برسائے جارہے ہیں جبکہ حکمران اور اُن کے کاسۂ لیس صرف ایک ہی بولی بول رہے ہیں، لاہور کا جلسہ ناکام ہوگیا، اگر جلسہ اتنا ہی ناکام تھا تو اُس کی براہِ راست کوریج پر کیوں پابندی لگائی گئی؟

نامور خاتون سیاستدان حنا پرویزبٹ اپنے ایک کالم میں لکھتی ہیں ۔۔۔۔۔۔۔اگر جلسہ اتنا ہی ناکام تھا تو شو آف ہینڈ اپناتے ہوئے سینیٹ کے الیکشن پہلے کروانے کی کیوں سوجھی؟ اگر جلسہ اتنا ہی ناکام تھا تو بی بی سی، الجزیرہ یہاں تک کہ روسی میڈیا نے اُسے حکومت کے خلاف موثر اور کامیاب عوامی ریفرنڈم کیوں قرار دیا؟ عوام بخوبی جان چکے ہیں کہ اُن پر جھوٹ مسلط کرکے سیاسی جنون کی تسکین کا سلسلہ جاری ہے جن سے اُنہیں گمراہ نہیں کیا جا سکتا ہے، اب وہ وقت آن پہنچا ہے کہ آئندہ انتخابات میں اُن کا نہ کوئی نام لیوا ہوگا اور نہ ہی ٹکٹ کا امیدوار۔ خود ساختہ والی ریاستِ مدینہ کو ایک بات یاد رکھنی چاہئے کہ جب اللہ کی پکڑ آ لیتی ہے تو پھر دنیا میں ادا نہ کئے گئے فرض کی بھر پائی نہیں ہوتی ہے، خدا کے روبرو عدم انصافیوں پر جواب نہیں بن پاتا ہے، جب اکائونٹ میں نیکیاں معدوم ہو جائیں تو یومِ حشر ظلمتوں کا کوئی حساب نہیں چکایا جا سکتا ہے، محض ایاک نعبد و ایاک نستعین کہنے سے دعا عملی روپ اختیار نہیں کرتی ہے، محض نام دہرا لینے سے جہاد کا فرض ادا نہیں ہو پاتا ہے۔

Sharing is caring!

Comments are closed.