وزراء کس طرح وزیراعظم اور قوم کو بیوقوف بنا رہے تھے ؟

لاہور (ویب ڈیسک) سابق چیئرمین رویت ہلال کمیٹی اور تنظیم المدارس اہلسنت پاکستان کے صدر مفتی منیب الرحمٰن نے کہا ہے کہ وزیروں کے بیانات جھوٹے تھے، فرانسیسی سفیر کی بیدخلی کا مطالبہ نہیں کیا، طاقت کا استعمال حکومت کیلئے تباہ کن ہوتا ہے، معاہدہ خود لکھا ہے ،مجھے یقین ہے معاہدہ پایہ تکمیل تک پہنچے گا،

معاہدہ کرکے چین کی نیند نہیں سوئیں گے ، چوکیداری کرینگے، ایک ہفتے میں تحریک لبیک کے نام کےساتھ کالعدم کا لفظ ختم ہوجائیگا، معاہدے میں خیانت ہوئی تو بڑی طاقت سے میدان میں آئینگے، لال مسجد والوں سے بھی لبرلز نے نادانی دکھائی،غلامی رسول میں موت بھی قبول کرنے والوں کووارننگز سے ڈرایا نہیں جا سکتا۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے کراچی میں صحافیوں سے گفتگو اور وزیرآباد میں کالعدم جماعت ٹی ایل پی کے شرکا سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔ جناح انٹرنیشنل ایئرپورٹ کے باہر میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے مفتی منیب الرحمٰن نے کہا کہ ملک بھر کے علما ء نے کہا مذاکرات میں اپنا کردار ادا کریں، ہمیں ریاستی طاقت استعمال کی وارننگز نہ دی جائیں، ہر شخص جانتا ہے حکومت کے پاس طاقت بھی ہوتی ہے جس کا غیر محتاط استعمال حکومت کیلئے تباہ کن ہوتا ہے، ہم اپنے طور پر پیغام دے رہے تھے، ہفتے کے روز رابطہ قائم ہوا، ہم اسلام آباد گئے، سب کی کوشش تھی یہ کام حکمت سے پس پردہ کیا جائے۔انہوں نے کہا کہ جو کچھ منظر پر دیکھ رہے تھے اسکا عمل سے تعلق نہیں تھا، حکومت کے کارندوں کا بھی اس عمل سے کوئی تعلق نہیں تھا، حکومت کے با اختیار لوگ جب جھوٹ بولیں تو مناسب نہیں، مذاکرات کیلئے ہم گئے، ہمارا کوئی ذاتی اور سیاسی ایجنڈا نہیں تھا، جو لوگ منظر پر کارستانیاں دکھا رہے تھے ان کا اس معاملے سے کوئی تعلق نہیں تھا۔مفتی منیب الرحمٰن نے کہا کہ مذہبی تحریک کی قیادت سے بات کی، ان کو ماضی میں دھوکا دیا گیا جو لوگ ٹی وی پر بیٹھ کر حکومتی رٹ کی وارننگز دے رہے تھے وہ نادان ہیں۔