وہ خوش قسمت انسا ن جو کلمہ طیبہ پڑھے بغیر جنت میں داخل ہو گیا

کیا آپ جانتے ہیں کہ وہ کونسا خوش قسمت انسا ن ہے جو کلمہ طیبہ پڑھے بغیر جنت میں داخل ہو گیا؟۔۔۔۔حضرت سعید بن زیدؓ کے والد زید نے فجار کی لڑائی میں جوعام فیل کے بیس سال بعد ہوئی، اپنے قبیلے بنو عدی کی نمائندگی کی۔ تب رسول اکرمﷺ کی عمر مبارک

بیس سال تھی اور آپﷺ بنوہاشم کے دستے میں شامل تھے۔حضرت سعید بن زید ؓ عشرہ مبشرہ صحابہ کرام میں شامل ہیں۔آپؓ کا رسول خداﷺ کے جانثار صحابہؓ میں شامل ہونا انکے والد حضرت زید ؓ کی دعا کانتیجہ ہےزید بتوں کی پوجا سےنفرت کرتے تھے، دینِ صحیح کی تلاش کرتے کرتے شامتک گئے۔ حضرت زیدؓ اللہ کے رسولﷺ کی تلاش میں سرگرداں ایسے عاشق رسول تھے جواسلام سے قبل ہی سرکاردوعالم ﷺ کی بعثت کی خاطر ظلم برداشت کرتے رہے لیکن دین ابراہیمی پر قائم رہے۔ حضرت زیدؓ ایک خوش قسمت شخصیت تھے جو کلمہ طیبہ پڑھے بغیر جنت میں داخل کر دئیے گئے۔ورقہ بن نوفل وہی ماہرانجیل تھے جنہوں نے حضور اکرم ﷺ پر پہلی وحی نازل ہونے کے بعد آپ ؐ کے نبی ہونے سے متعلق نشانیوں کا تذکرہ آپ ؐ سے کیا تھا ۔ورقہ بن نوفل سے متعلق تاریخ کی کتابوں میں آتا ہے کہ آپ ام المومنین حضرت خدیجۃ الکبریؓ کے رشتہ دار بھی تھے۔حضرت زید ؓ کے ساتھ ورقہ بن نوفل بھی تھے جنھوں نے پہلے مذہبِ یہود اختیار کیا پھر نصرانی بن گئے

Sharing is caring!

Comments are closed.