پاکستانی میڈیا نے میرے ساتھ کیا گیم کی ؟

لاہور (ویب ڈیسک)معروف اداکارہ و گلوکارہ میشا شفیع نے گزشتہ روزکہا کہ ساتھی گلوکار و اداکار علی ظفر کی جانب سے ان کو چھیڑے جانے کے بعد بہت سی شوبز انڈسٹری کی خواتین نے ان سے رابطہ کیا اور اپنے ساتھ ایسے واقعات پر بات کی۔میشا کا کہنا تھا کہ وہ ان خواتین کے نام نہیں بتا سکتیں

لیکن ان کا ماننا ہے کہ انہوں نے ان سے بات اس لیے کی کیونکہ وہ جانتی ہیں کہ میں ان کی بات سمجھ سکتی ہوں۔ان کا کہنا تھا کہ میڈیا نے ان کے کیس کی بہت غلط رپورٹنگ کی۔ ’مجھے عدالت نے اس سے پہلے بلایا ہی نہیں اس لیے میں پیش نہیں ہوئی۔ اب جب انہوں نے بلایا ہے تو میں حاضر ہو گئی ہوں۔‘میشا کا کہنا ہے کہ وہ نہیں جانتیں کہ اس کیس کا انجام کیا ہوگا لیکن وہ حق اور سچ کے ساتھ کھڑی ہیں۔انہوں نے یہ بھی دعویٰ کیا کہ انہیں اس کیس کی وجہ سے بہت مالی نقصان ہوا۔ تاہم علی ظفر کے وکیل ایڈوکیٹ رانا انتظار نے میڈیا کو بتایا کہ’میشا نے جو علی ظفر پرالزامات لگائے تھے اب انہیں کوور کرنے کے لیے یہ ایسی باتیں کر رہی ہیں۔’اگر کسی خاتون کو چھیڑے جانے کی شکایت تھی تو وہ عدالت سے یا کسی اور فورم سے رجوع کرتیں۔ عدالت نے ان کو بلایا تھا اور آج بھی بلایا ۔ انہیں سمن کیا گیا جس کے بعد آج یہ پیش ہوئی ہیں۔‘ علی ظفر کی جانب سے میشا شفیع کے خلاف ایک ارب روپے کے ہتک عزت کیس کی سماعت کے لیے میشا شفیع گزشتہ روز لاہور سیشن کورٹ میں ایڈیشنل سیشن جج خان محمود کی عدالت میں پیش ہوئیں۔اس کیس کی سماعت پہلے دونوں جانب کے وکلا کی عدم موجودگی کے سبب دوپہر دو بجے تک ملتوی ہوئی پھر سماعت 22 دسمبر تک ملتوی کر دی گئی۔ یاد رہے علی ظفر نے چھیڑ خانی کے الزامات عائد کرنے پر میشا شفیع کے خلاف ہتک عزت کا دعویٰ دائر کر رکھا ہے۔

Comments are closed.