پاکستان افغانستان کے اندرونی معاملات میں مداخلت نہیں کرر ہا بلکہ ۔۔۔۔۔

کابل (ویب ڈیسک) افغان وزارتِ انفارمیشن اینڈ کلچر کے نائب وزیر ذبیح اللّٰہ کا کہنا ہے کہ افغانستان میں قیامِِ امن کے لیے پاکستانی وزیرِ اعظم عمران خان کی کوششیں قابلِ ستائش ہیں، پاکستان افغانستان کے اندرونی معاملات میں مداخلت نہیں کر رہا۔افغانستان کے دارالحکومت کابل میں افغان میڈیا سے گفتگو کرتےہوئے

افغان وزارتِ انفارمیشن اینڈ کلچر کے نائب وزیر ذبیح اللّٰہ نے کہا کہ افغان حکومت کو تسلیم کیئے بغیر حقوق کی خلاف ورزیوں کے حوالے سے ہم پر تنقید کی جا رہی ہے، ہمارے خیال میں یہ یک طرفہ نقطۂ نظر ہے۔انہوں نے کہا کہ تنقید کرنے والوں کے لیے اچھا ہو گا کہ وہ ہمارے ساتھ ذمے دارانہ طور پر برتاؤ کریں، تنقید کرنے والے ہماری حکومت کو ذمے دار انتظامیہ کے طور پر تسلیم کریں۔ذبیح اللّٰہ کا مزید کہنا ہے کہ افغان حکومت کو تسلیم کرنے کے بعد قانونی طور پر اپنے خدشات ہمارے ساتھ شیئر کر سکتے ہیں، افغان حکومت کو تسلیم کرنے کے بعد ہم ان کے خدشات دور کریں گے۔ان کا کہنا ہے کہ ننگر ہار کے حالیہ اٹیکس کے الزام میں 2 گروپوں کے افراد کو گرفتار کیا گیا ہے، افغان عوام کے نزدیک آئسز کے خیالات نفرت انگیز ہیں۔افغان وزارتِ انفارمیشن اینڈ کلچر کے نائب وزیر نے کہا ہے کہ ماضی میں آئسز کے خلاف ہماری کارروائیاں مؤثر رہی ہیں، ہم جانتے ہیں کہ آئسز کی تکنیک کو کس طرح ناکام بنانا ہے۔ذبیح اللّٰہ نے مزید کہا کہ ننگر ہار اور جلال آباد میں حالیہ بدامنی کے واقعات کی مذمت کرتے ہیں، افغانستان میں بدامنی کے واقعات پرجلد قابو پا لیں گے۔ان کا یہ بھی کہنا ہے کہ افغانستان میں کسی ملک کی مداخلت نہیں چاہتے، مگر تعاون کا خیر مقدم کریں گے، ملک میں مشکلات کے باوجود جلد استحکام پیدا ہو جائے گا۔اور افغانستان ترقی کی راہ پر گامزن ہو جائے گا ۔

Comments are closed.