کورونا کی دوسری لہر اچانک خوفناک ۔۔۔۔۔۔

پیرس (ویب ڈیسک) فرانس میں ایک ہی دن میں کورونا وائرس کے ریکارڈ سترہ ہزار نئے مریض سامنے آئے ہیں جبکہ برطانیہ میں یہ یومیہ تعداد تیرہ ہزار رہی۔ کورونا وائرس یورپ کو اب دوبارہ اپنی گرفت میں لے رہا ہے۔یورپ بھر میں مہلک کورونا وائرس کے کیسز بڑھتے جا رہے ہیں

جبکہ فرانس اور برطانیہ میں یومیہ کیسز کے حوالے سے ایک نیا ریکارڈ قائم ہو گیا ہے۔فرانس نے ہفتے کی شام سترہ ہزار نئے کیسز ریکارڈ کیے جبکہ وہاں ایک ہی دن میں اموات کی تعداد انچاس رہی۔ اس طرح اس یورپی ملک میں کورونا وائرس سے متاثر ہونے والوں کی شرح بڑھ کر تقریباﹰ آٹھ فیصد ہو گئی ہے۔ قبل ازیں یہ شرح سات اعشاریہ سات فیصد تھی۔برطانیہ کی وزارت صحت نے گزشتہ روز تیرہ ہزار نئے کیسز ریکارڈ کیے۔ یہ تعداد جمعے کے روز منظر عام پر آنے والے نئے کورونا مریضوں کی تعداد کے مقابلے میں دگنی بنتی ہے۔ برطانوی حکام کے مطابق کورونا کے مریضوں کی تعداد میں یہ اچانک اضافہ ایک ‘تکنیکی مسئلے‘ کی وجہ سے ہوا ہے۔ حکام کے مطابق سینکڑوں مریضوں کے کورونا وائرس ٹیسٹوں کے نتائج تاخیر کی وجہ سے ہفتے کے روز جاری کیے گئے، جس کی وجہ سے اس قدر یومیہ اضافہ دیکھا گیا۔یورپ کو اس وقت کورونا وائرس کی دوسری لہر کا سامنا ہے اور یورپ بھر میں نئی پابندیاں متعارف کرائی جا رہی ہیں۔جرمنی کے روبرٹ کوخ انسٹیٹیوٹ کے اعداد و شمار کے مطابق ملک میں گزشتہ چوبیس گھنٹوں کے دوران کووڈ انیس کے نئے مریضوں کی تعداد تقریباﹰ تیئیس سو رہی جبکہ دو مزید مریض انتقال کر گئے ۔ جرمنی میں اب تک کورونا کے باعث اموات کی تعداد نو ہزار پانچ سو انتیس ہو چکی ہے۔اٹلی میں ہفتے کے روز اٹھائیس سو چوالیس نئے کیسز سامنے آئے اور یہ یومیہ تعداد اپریل کے بعد سے سب سے زیادہ ہے۔ اٹلی میں گزشتہ روز اموات کی تعداد ستائیس رہی۔ اطالوی حکومت کے مطابق بڑھتی ہوئی کورونا وائرس انفیکشنز کو روکنے کے لیے جلد ہی نئی پابندیوں کا اعلان کیا جائے گا، جن کے تحت عوامی مقامات پر بھی ماسک پہننا لازمی قرار دے دیا جائے گا۔

Sharing is caring!

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *