لاہور (ویب ڈیسک) لاہور کے علاقے سندر میں چند دن پہلے طالبہ سے جبراً غلط کار کے کیس میں نئی حقیقت سامنے آگئی ۔ملزم کے گھر والوں نے دونوں کی شادی کی ویڈیوز دیتے ہوئے بتایا کہ شادی دونوں خاندانوں کی رضامندی سے خوشگوار ماحول میں ہوئی، لڑکی کے گھر والوں نے بعد میں پیسے

مانگ لئے جس پر معاملہ بگڑ گیا۔ملزم حیدر کے والد محمد حسین کے مطابق حیدر کا 7 اکتوبر 2021ء کو لڑکی سے دونوں خاندانوں کی رضامندی سے نکاح ہوا، نکاح پر سب ایک دوسرے کو مٹھائیاں کھلاتے رہے، لڑکی والے لڑکی کی رخصتی نہیں کررہے تھے۔انہوں نے لڑکی کی دوسری بہن کی شادی کیلئے 5 لاکھ روپے کا مطالبہ کر دیا، حیدر کی جانب سے اس کی بیوی کی رخصتی نہ کرنے پر اندراج مقدمہ کی درخواست بھی دی گئی، مگر پولیس نے مقدمہ درج نہ کیا، اب لڑکی کے گھر والوں نے حیدر کے خلاف غلط کاری کا جھوٹا مقدمہ درج کروادیا۔محمد حسین نےمطالبہ کیا کہ بیٹے کے خلاف مقدمہ خارج کرکے اسے رہا کیا جائے۔پولیس کا کہنا ہے کہ معاملے کا جائزہ لے رہے ہیں