گلگت بلتستان کے سابق جج رانا شمیم اور میاں نواز شریف میں پرانی دوستی

اسلام آباد (ویب ڈیسک) گلگت بلتستان کے سابق چیف جج رانا شمیم کے صاحبزادے اور وکیل احمد حسن رانا کا کہنا ہے کہ ان کے والد کی نواز شریف سے پرانی دوستی ہے، عالمی وبا آنے سے پہلے جب وہ انگلینڈ گئے تو ان کی سابق وزیر اعظم سے ملاقات ہوئی تھی،

26 نومبر کو ان کے والد ذاتی حیثیت میں عدالت میں پیش ہوں گے۔نجی ٹی وی چینل کے پروگرام میں گفتگو کرتے ہوئے احمد حسن رانا نے کہا کہ وہ آج اسلام آباد ہائیکورٹ میں اپنے والد کی طرف سے کیس کی اگلی تاریخ لینے کیلئے پیش ہوئے تھے۔ والد صاحب نے کہا کہ جتنا کہا جائے اتنا ہی کرو، وہ اپنی مرضی سے بات کرتے ہیں، جتنا انہوں نے بتایا اتنا بول دیا اور جتنا منع کریں گے وہ نہیں بولوں گا۔انہوں نے کہا”میرےوالد سابق چیف جسٹس ہیں اور انہیں آرڈر دینے کی عادت ہے، میرے دوستوں سے بھی پوچھ سکتے ہیں کہ اپنے والد کے سامنے میری کیا حیثیت ہے، میں 43 سال کا ہوگیا ہوں ، اگر میں نے رات کو سنوکر کھیلنے جانا ہو تو والد صاحب سے اجازت لینی پڑتی ہے۔میں نے فون کیا اور کہا کہ کیا میں بات کرسکتا ہوں تو بچوں نے بتایا کہ وہ آرام کر رہے ہیں۔ میری بیگم اجازت لے کر دیں گی تو ہی ان سے کیس کے بارے میں مزید بات کرسکتا ہوں۔”احمد حسن نے بتایا کہ ان کے والد عالمی وبا سے پہلے انگلینڈ گئے تھے اور وہاں انہوں نے نواز شریف سے ملاقات کی تھی۔ ان کے والد کا نواز شریف سے براہ راست رابطہ رہا ہے،انہوں نے میمو گیٹ سکینڈل میں بھی ان کی وکالت کی، دونوں دوست ہیں اور ذاتی طور پر ایک دوسرے کو جانتے ہیں۔انہوں نے بتایا کہ جس وقت نواز شریف گرفتار ہوئے تو اس وقت وہ اسسٹنٹ ایڈووکیٹ جنرل پنجاب تھے، وہ قید میں نواز شریف سے ملاقات کیلئے گئے تو اپنا تعارف کرایا جس پر نواز شریف بڑے تپاک کے ساتھ ملے۔ احمد حسن نے کہا کہ 26 نومبر کو اگلی پیشی ہے جس پر ان کے والد جسٹس (ر) رانا شمیم عدالت میں ذاتی حیثیت میں پیش ہوں گے۔خیال رہے کہ گلگت بلتستان کے سابق چیف جج رانا شمیم نے ایک حلف نامہ جمع کرایا ہے جس میں انہوں نے الزام عائد کیا کہ ان کے سامنے سابق چیف جسٹس ثاقب نثار نے ایک جج کو فون کرکے کہا کہ سابق وزیر اعظم نواز شریف اور مریم نواز کو الیکشن سے پہلے ضمانت نہیں دینی۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *