گورنر بلوچستان کا عمران خان کو چیلنج

اسلام آ باد ( ویب ڈیسک) گورنر بلوچستان جسٹس ( ر) امان اللہ یاسین زئی نے اپنے عہدےمستعفی ہونے سے انکار کردیا ہے۔ ذرائع کے مطا بق گورنر بلوچستان نے وزیر اعظم کی جانب سے لکھے گئے خط پر اپنے ردعمل میں وزیر اعظم سے کہا ہےکہ سیاست آپکے بس کی بات نہیں،

آپ کو اتنا پتہ نہیں ہیں کہ استعفٰی لینا صدر پاکستان کی ذمہ داری ہے یا وزیر اعظم کی ۔ آپ کِن کے اشاروں سے آئے ہیں ۔سب سے پہلے وزیر اعلیٰ جام کمال سے لیں استعفی ، وزیر اعظم، وزیر اعلیٰ کی اتنی حثیت نہیں کہ مجھ سے استعفیٰ دلوا ئیں،گورنر شپ کی کوئی حثیت نھی میرے سامنے ۔ اگر بات ضِد پر آتی ہے تو میں بھی کوئٹہ بلوچستان کا لوکل باشندہ کاکڑ ہوں ۔ مجھے چمچہ گیری اور کسی کے پیچھے جانے کا شوق نھیں ہے اور نہ یہ امید مجھ سے رکھی جا ئے ۔بلوچستان لاوارِث صوبہ نھیں ہےکہ ہر کو ئی من مانی کرکے چلا ئے۔ نان لوکل لوگوں کے نام اپنے مرضی سے گورنر شپ کیلئے چُن لیئے۔ اگر نان لوکل کی بات آ ئی تو یہ بات سن لیں کہ ہم لوکل پشتون اور بلوچ کسی بھی حد تک جاسکتے ہیں تاریخ گواہ ہے ہماری ۔گورنر بلوچستان نے کہا ہے کہ میں کیوں آئوں اسلام آباد آپکی میٹنگ اٹینڈ کرنے ۔میرا کام ہوگا تو آئوں گا ۔ آپ کا کام ہے تو آپ کوئٹہ آئیں ۔ کسی صورت مستعفی نہیں ہونگا سپریم کورٹ تک قانونی لڑائی لڑنے کا اعلان کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ میرے خلاف بلوچستان عوامی پارٹی سازش کررہی ہیں آپکی یہ سازش ناکام ہوجا ئیگی۔

Comments are closed.