ہالی وڈ کی خوبصورت خاتون کامیڈین کا حیران کن انکشاف

لاس اینجلس (ویب ڈیسک)آسٹریلوی نژاد ہولی وڈ اداکارہ و کامیڈین ریبل ولسن نے کہا ہے کہ مرد حضرات انہیں دیکھتے ہی شدید انجانے خوف میں مبتلا ہوجاتے ہیں اور ایسے مرد حضرات کو لگتا ہے کہ وہ کچھ ہی لمحوں میں ان کی شخصیت پر کوئی نہ کوئی فقرہ کس دیں گی۔

برطانوی اخبار دی انڈیپینڈنٹ کو دیے گئے خصوصی انٹرویو میں 40 سالہ ریبل ولسن نے کہا ہے کہ ہائی اسکول کی تعلیم کے دوران ہی ہارمونز کی خرابی کے باعث ان کا وزن تیزی سے بڑھنے لگا اور انہیں شرمندگی کا احساس بھی ہونے لگا۔اداکارہ نے بتایا کہ دوران تعلیم ہی انہیں اداکاری اور خصوصی طور پر کامیڈین بننے کا شوق ہوا اور بعد ازاں معروف ہولی وڈ اداکارہ نکولو کڈمین کی جانب سے اسکالر شپ دیے جانے کے بعد وہ تعلیم کے لیے امریکا منتقل ہوگئیں۔آسٹریلوی نژاد اداکارہ کا کہنا تھا کہ کچھ دہائیاں قبل خاتون کامیڈین ہونا آسٹریلیا میں ناقابل قبول تھا اور خیال کیا جاتا تھا کہ خواتین مزاح نہیں کرسکتیں اور اگر وہ مزاح کرتی بھی ہیں تو وہ مرد حضرات کی طرح شاندار مزاح نہیں کرسکتیں۔اداکارہ نے خود کو خوش قمست قرار دیا اور کہا کہ یہ ان کی خوش نصیبی ہے کہ وہ امریکا منتقل ہوگئیں اور انہوں نے وہی سے کیریئر کا آغاز کیا اور اس وقت ہولی وڈ میں خواتین کو غیر روایتی کرداروں کے لیے بھی منتخب کیا جانے لگا تھا۔اداکارہ نے بتایا کہ اب بھی لوگ یہی سوچتے ہیں کہ مرد کامیڈین کے مقابلے خواتین اچھی کامیڈی کر ہی نہیں سکتیں اور خواتین کو بطور کامیڈین اب بھی انتہائی کم پذیرائی ملتی ہے۔برطانوی اخبار ڈیلی میل کے مطابق ریبل ولسن نے اعتراف کیا کہ بھاری وزن کی وجہ سے انہیں کئی ڈراموں اور فلموں میں کام ملا اور انہیں ایسا ہی وزن برقرار رکھنے کے پیسے بھی ملے مگر اب وہ اپنا وزن کم کرکے ہی رہیں گی۔

Sharing is caring!

Comments are closed.