ہر ڈش میں استعمال ہونیوالی سبزی کی قیمت میں 40 روپے فی کلو کے حساب سے اضافہ

کراچی (ویب ڈیسک)کاشت کاروں نے ٹماٹر کی قیمت صفر پر آنے پر چند روز قبل ٹماٹر کی فصل کو ٹریکٹر چلا کر تباہ کردیا تھا ۔جبکہ ڈگری اور اس کے اطراف کے علاقوں میں کاشت کاروں گھروں مفت ٹماٹر تقسیم کیا تھا اس صورتحال کے اب منفی اثرات ٹماٹر کی قیمتوں پر آنے لگے۔

اب رسد کم اور طلب زیادہ ہونے پر۔سندھ میں ٹماٹر کی قیمتوں نے اڑان بھرلی, 10 روپے کلو فروخت ہونے والا ٹماٹر 50 روپے کلو میں فروخت ہونے لگا۔تفصیلات کے مطابق ٹماٹر کی پیداواری لاگت زیادہ اور قیمت فروخت صفر ہونے پر ڈگری ۔بدین۔ٹھٹہ اور دیگر علاقوں نے ٹماٹر کی فصل کو ٹریکٹر چلا کر تباہ کردیا۔جبکہ مویشیوں کو بھی چارے کی جگہ ٹماٹر کھلائے گئے ۔کاشت کاروں نے سبزی منڈی فروخت کے لئے جب ٹماٹر فروخت کئے تو کاشت کاروں کو آرھتی نے ادائیگی کرنے کے بجائے کاشت کاروں پر کلیم ڈال دئیے۔کیونکہ ٹرانسپورٹ کا کرایہ آڑھتی ادا کرتا ہے۔ ۔اسطرح ٹماٹر کی قیمت فروخت صفر پرگئی ۔تاہم منڈی کے تاجروں کا کہنا ہے ٹماٹر کی فصل تباہ کرنے پر اب مارکیٹ میں کھپت وہی ہے تاہم سپلائی کم ہوگئی ہے۔تاہم منڈی میں ہفتہ کو ٹ ٹماٹر کی تھوک قیمت 25 روپے کلو تک رہی ۔تاجروں کا کہنا ہے کہ ڈگری۔بدین اور ٹھٹہ کی فصل ختم ہوگئی ہے ۔اب چند روز میں لاڑکانہ اور جیکب آباد کے اطراف کے علاقوں میں ٹماٹر تیار ہوگئی ہے ۔اور چند روز میں میں فصل مارکیٹ میں اجائے گئی۔۔تاجروں کا کہنا تھا کہ اسی صورتحال نہیں کہ ٹماٹر کی ضرورت کو پورا کرنے کے لئے بھارت سے ٹماٹر درآمد کئے جائیں ۔تاجروں کا کہنا تھا کہ رمضان المبارک کے دوران ٹماٹر کی قلت نہیں ہوگئی تاہم قیمت 50 یا 60 روپے کلو تک ضرور رہے گئی۔تاجروں کا کہنا ہے کہ 50 سے 60 روپے میں کاشت کاروں کو فائدہ ہے۔کیونکہ پیداواری بہت زیادہ ہونے پر 50 سے 60 روپے سے کم قیمت میں ٹماٹر کی فروخت میں کاشت کار کو بھارہ مالی نقصان برداشت کرنا پڑتا ہے۔

Sharing is caring!

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *